آرمی چیف کا معاملہ نااہل حکمرانوں نے جان بوجھ کر الجھایا ہوا ہے،آرٹیکل 243میں ترمیم کیلئےحکومت سنجیدہ ہےتوبات کرے:سعید غنی

آرمی چیف کا معاملہ نااہل حکمرانوں نے جان بوجھ کر الجھایا ہوا ہے،آرٹیکل 243میں ...
آرمی چیف کا معاملہ نااہل حکمرانوں نے جان بوجھ کر الجھایا ہوا ہے،آرٹیکل 243میں ترمیم کیلئےحکومت سنجیدہ ہےتوبات کرے:سعید غنی

  



کراچی (ڈیلی پاکستان آن لائن)پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما اورصوبائی وزیر اطلاعات سندھ سعید غنی نے کہاہےکہ اِس وقت ملکی معیشت کی صورتحال اورمہنگائی کی شرح میں جو اضافہ ہوا ہے،اُس نے9سالہ ریکارڈ توڑ دئیے ہیں،ملکی معیشت کو اگر سیدھا کرنا ہے تو اِن نااہل اورسلیکٹیڈ حکمرانوں سے ہمیں اپنی جان چھڑانی ہوگی، آرمی چیف کے معاملے کو موجودہ نااہل حکمرانوں نے جان بوجھ کر الجھایا ہوا ہے اور وہ پاکستانی فوج کا امیج عالمی سطح پر خراب کرنے کے درپے ہیں،اس وقت صوبہ پنجاب میں 83فیصد ہسپتالوں میں کتے کے کاٹنے کے ویکسین دستیاب نہیں اور خودوزیراعظم کےحلقہ انتخاب میں ایک بچی سانپ کے کاٹنے اور ویکسین نہ ملنے پرجاں بحق ہوگئی،یہ تمام رپورٹس میڈیا کے ذریعے نہیں بلکہ مختلف سرکاری اداروں کی جانب سے آرہی ہیں،پاکستان بیورو آف سٹیٹکس کی اس ماہ کی رپورٹ کے مطابق ملک کے دیہی علاقوں میں 12.07 جبکہ شہری علاقوں میں 16.07 فیصد مہنگائی ہوئی ہے اور یہ ملکی تاریخ میں 9 سالہ ریکارڈ مہنگائی ہے اور اس کی ذمہ دار مکمل طور پر موجودہ سلیکٹیڈ اور نااہل حکومت ہے۔

سندھ اسمبلی کے باہر میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے سعید غنی نے کہا کہ وفا قی حکومت کو غریبو ں کی کوئی پر واہ نہیں ہے کیونکہ یہ لو گ عوام کے ووٹو ں سے نہیں بلکہ چو ر دروازے سےاِقتدا ر میں آئےہیں،اِس حکومت کوعوام کااِحسا س نہیں اورملک کےکر وڑو ں لو گ اِن کوبھگتنے پرمجبو رہیں،عوام کےمنتخب وزیرو ں کو ٹماٹر اورمٹر کے نر خو ں کا علم نہیں وہ مہنگا ئی کوکیا کنٹرو ل کرینگے۔اُنہوں نےکہاکہ اِس ملک کاکو ئی فرد ایسانہیں جو سکو ن کی زندگی گز ار رہا ہو۔سعید غنی نے کہا کہ وزیر اعظم وزیر اعلی پنجا ب کی تعریف کرتے نہیں تھکتے لیکن وہا ں حا ل یہ ہے کہ صو بہ میں پا نچ آئی جی،4 چیف سیکریٹریزاور90سےزیادہ مختلف محکموں کے سیکرٹریز تبدیل کر دیئے گئے ہیں لیکن کہتے ہیں کہ پنجاب میں گورنس اچھی ہے،وزیر اعظم نے کہا ملک کے بہترین بیورکریٹس پنجاب میں لگائے گئے ہیں،بزدار نے اگر اچھا کام کیا ہے تو تبادلوں کی کیا ضرورت پیش آئی؟اِس لئے ہم کہتے ہیں کہ جب تک نا اہل حکمرا ن بر سر اقتدار رہیں گے ملک میں بہتری نہیں آئے گی۔

سعید  غنی نے کہا کہ خبر شائع ہوئی ہے کہ پنجاب کے ہسپتالوں میں اینٹی ریبیز 83 فیصد ہسپتالوں میں نہیں ہے، پنجاب میں 2091 میں سے1732 مراکز ایسے ہیں جہاں یہ ویکسین نہیں جبکہ پی ٹی آئی سندھ حکومت کو کہتی ہے کہ سندھ میں ویکسین نہیں ہے جبکہ ہم تو ایک ایک ویکسین کی تفصیل بتا چکے ہیں،اس سے اندازہ کریں پنجاب میں کیا صورتحال ہوگی؟ وزیر اعظم کے حلقے میانوالی میں سانپ کے ڈسنے سے بچی کی جان چلی گئی اور وہاں کہیں بھی ویکسین نہیں ملی کیوںکہ ویکسین کی کمی پوری پاکستان میں ہے۔ اُنہوں نے کہا کہ ادارہ شماریات کے مطابق ملک میں مہنگائی گزشتہ 9 سالوں سے زیادہ بڑھی ہے،اس حکومت کو عوام کا کوئی احساس نہیں،ملک کے کروڑوں لوگ اِس نا اہل حکمرانوں کوبھگت رہےہیں،جس حکومت کےوزیروں کوٹماٹراورمٹر کےریٹ کاپتانہ ہو وہ مہنگائی کو کیا کنٹرول کریں گے؟اِس ملک کا کوئی فرد ایسا نہیں جو سکون کی زندگی گزار رہا ہو،خرابی جہاں ہے وہاں تبدیلی نہیں آرہی۔

ایک سوال کے جواب میں سعید غنی نے کہا کہ اِن ہاؤ س تبدیلی کا ذکر آئین میں موجودہے،نالائقی اور نااہلی اوپر کی سطح پر ہے، وزیر قانون،اٹارنی جنرل پاکستان کے بہترین وکیل بھی ایک نوٹیفکیشن درست نہ بناسکے، آرمی چیف کی توسیع کی فائل کوئی عام نہیں اہمیت کی حامل ہے،صدرمملکت کا یہ کہناکہ یاد نہیں رہاغلط بیانی ہے،سپریم کورٹ میں جاکر جھوٹ بولا گیاہے، دیکھنا ہوگاکہ یہ نالائقی ہے یاجان بوجھ کر ایساکیاگیا؟۔انہوں نے کہا کہ ہمیں ہمیشہ عوام نے منتخب کیا اورعمران خان کوجس نے سلیکٹ کیا انکاسب کو معلوم ہے، آرٹیکل 243میں ترمیم کیلئے دوتہائی اکثریت درکار ہے،حکومت سنجیدہ ہوتی تو بات چیت کرتی لیکن اس ایشو کو متنازعہ بنانے کی کوشش کی گئی، پیپلزپارٹی کو تر نوالہ نہ سمجھا جائے،اگر ترمیم کروانی ہیں تو سنجیدہ مذاکرات کیے جائیں اور زیادتیاں بندکی جائیں۔

مزید : علاقائی /سندھ /کراچی