پارلیمنٹ اورسپیکرکوبےتوقیرکردیاگیا،حکومت الیکشن کمیشن کےغیرفعال ہونے کی ذمہ دارہے:احسن اقبال

پارلیمنٹ اورسپیکرکوبےتوقیرکردیاگیا،حکومت الیکشن کمیشن کےغیرفعال ہونے کی ...
پارلیمنٹ اورسپیکرکوبےتوقیرکردیاگیا،حکومت الیکشن کمیشن کےغیرفعال ہونے کی ذمہ دارہے:احسن اقبال

  



اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن) پاکستان مسلم لیگ (ن) نے رانا ثناء اللہ کے پروڈکشن آر ڈر جاری نہ کر نے پر سخت تشویش کااظہار کرتے ہوئے کہاہے کہ پارلیمنٹ اور سپیکر کو بے توقیر کر دیا گیا ہے،سپیکر پروڈکشن آر ڈر جاری کرتے ہیں تو اراکین کو ایوان میں نہیں لایاجاتاہے،مسلم لیگ ن اس وقت تک اجلاس میں شریک نہیں ہوگی جب تک کہ تمام اسیران اراکین کو ایوان میں نہیں لایا جاتا،نیازی صاحب کے پاس کوئی ثبوت نہیں، شریف خاندان کا میڈیا ٹرائل کیا جا رہا ہے،حکومت الیکشن کمیشن کے غیر فعال ہونے کی ذمہ دار ہے۔

محسن شاہنواز رانجھا اورمیاں جاویدلطیف کےہمراہ پریس کانفرنس سےخطاب کرتےہوئےاَحسن اقبال نےکہاکہ خواجہ سعدرفیق کےاحکامات جاری ہوئےلیکن اِنہیں نہیں لایا گیا،چار اراکین کے پروڈکشن آرڈرزجاری کئےگئے،رانا ثنا اللہ کے پروڈکشن آرڈرز جاری نہیں کئےگئے۔ اُنہوں نےکہاکہ اراکین کا حق ہے کہ اُن کے پروڈکشن آرڈر جاری کئے جائیں،سپیکر پروڈکشن آرڈر جاری کرتے ہیں توحکومت اراکین کواسمبلی میں نہیں لاتی،پارلیمنٹ اورسپیکرکو بےتوقیر کردیا گیا ہے، مسلم لیگ ن اس وقت تک اجلاس میں شریک نہیں ہوگی جب تک کہ تمام اسیران اراکین کو ایوان میں نہیں لایا جاتا، ہم نے باقی اپوزیشن جماعتوں سے بھی کہا ہے کہ اس میں ہمارا ساتھ دیں۔اُنہوں  نے کہاکہ ملک میں مہنگائی تیرہ فیصد پر پہنچ چکی ہے،تنخواہ دار،مزدورکےلئےجینادوبھرکردیاگیاہے،نام نہاد احتساب سیل نے پریس کانفرنس کرکےاپوزیشن لیڈرپرالزامات عائد کئےجبکہ دوسری طرف  سپریم کورٹ میں شہبازشریف کی ضمانت کےخلاف درخواست واپس لے لی گئی کیونکہ اُن کے پاس کوئی ثبوت نہیں تھا۔

احسن اقبال نے کہاکہ آپ سپریم کورٹ میں تو کوئی ثبوت پیش نہیں کرسکے لیکن پریس کانفرنس کرکے الزامات عائد کئے گئے، میڈیا ٹرائل کیا جارہا ہے، نیازی صاحب کے پاس کوئی ثبوت نہیں ہے،مسلم لیگ ن کے راہنماؤں کا عدالت میں اوپن ٹرائل کیا جائے۔ انہوں نے کہاکہ حکومت الیکشن کمیشن کےغیرفعال ہونے کی ذمہ دارہے،قواعد اور آئین سےہٹ کرپہلےحکومت نےدواراکین الیکشن کمیشن کاتقررکیا جو عدالتوں نے منسوخ کردیا۔ انہوں نےکہاکہ صدرسےغلط نوٹیفیکیشن کرواکر انہوں نے صدر کو قابل مواخذہ بنادیا،جس وقت چیف الیکشن کمشنر کی ریٹائرمنٹ کا وقت آگیا تو اس وقت حکومت نے تین نام دیئے، صاف طے ہے کہ حکومت کی نیت میں کھوٹ ہے، پی ٹی آئی فارن فنڈنگ کیس سے بچنے کے لئے الیکشن کمیشن کو غیر فعال کیا۔

مزید : قومی