یمن ‘شدت پسندوں نے غیر ملکی سفیروں کو ملک چھوڑنے سے روک دیا

یمن ‘شدت پسندوں نے غیر ملکی سفیروں کو ملک چھوڑنے سے روک دیا

صنعاء(آئی این پی) یمن میں مسلح بغاوت کے بعد سرکاری مراکز پر قبضہ کرنے والے حوثی شدت پسندوں نے دارالحکومت صنعاء میں موجود غیر ملکی سفیروں کو ملک چھوڑنے سے روک دیا۔عالمی میڈیا کے مطابق حکام کا کہنا ہے کہ ملک میں مسلح بغاوت کے بعد سرکاری مراکز پر قبضہ کرنے والے حوثی شدت پسندوں نے دارالحکومت میں موجود غیر ملکی سفیروں کو ملک چھوڑنے سے روک دیا ہے۔یمنی حکومت کے ایک مصدقہ ذرئع نے بتایا کہ غیر ملکی سفیروں کے ایک گروپ نے واپس اپنے ملکوں میں جانے کی تیاریاں شروع کی تھیں۔

ان سفیروں کی بیرون ملک روانگی کا مقصد یمن میں جاری کشیدگی کو ختم کرنے اور حوثی شدت پسندوں کی بغاوت کو روکنے کے لیے عالمی سطح پر مفاہمتی کوششوں کو تیز کرنا تھا تاہم حوثیوں کی جانب سے قائم کردہ غیر قانونی اتھارٹی نے غیر ملکی سفیروں کو یمن چھوڑنے سے روک دیا گیا ہے۔ادھر صنعاء میں ایک سفارتی ذرئع نے بتایا کہ حال ہی میں غیر ملکی سفیروں نے صنعاء میں اپنے سفارت خانے بند کرنے کی دھمکی دی ہے۔ غیر ملکی سفیروں کا کہنا ہے کہ اگر یمن میں جاری خون خرابہ بند اور حوثیوں کی مسلح بغاوت ختم نہیں ہوتی وہ سفارتی سرگرمیاں جاری نہیں رکھ سکتے ہیں۔خیال رہے کہ یمن میں پچھلے چند ماہ سے پیدا ہونے والی کشیدگی کے بعد ملک بدترین داخلی بحران سے گزر رہا ہے۔ جب سے شیعہ حوثی شدت پسندوں نے مسلح بغاوت کے بعد حکومتی مراکز پر قبضہ کیا ہے تب سے ملک میں سیاسی مفاہمت کی کوششیں بار بار تعطل کا شکار ہوئی ہیں۔ حوثی شدت پسندوں نے دارالحکومت صنعاء میں متوازی حکومت قائم کر رکھی ہے۔ پولیس اور فوج کی جگہ شہروں کا نظم ونسق حوثی ملیشیا کے ہاتھ میں ہے۔

مزید : عالمی منظر