معذوروں کی آسامیوں پر بھرتی اور جرمانہ رقم کی رپورٹ طلب

  معذوروں کی آسامیوں پر بھرتی اور جرمانہ رقم کی رپورٹ طلب

  



پشاور(نیوزرپورٹر)پشاور ہائیکورٹ نے مختلف سرکاری محکموں میں معذوروں کی خالی آسامیوں اور اس مد میں جمع ہونے والی جرمانہ کی رقم کی رپورٹ طلب کرلی چیف جسٹس پشاور ہائیکورٹ وقار احمد سیٹھ اور جسٹس ناصر محفوظ نے سماعت کی درخواست گزار فہیمہ گل نے معذوروں کی خالی آسامیوں پر تعیناتی نہ ہونے پر توہین عدالت کی درخواست دی تھی کیس کی سماعت شروع ہوئی تو درخواست گذار کے والد عدالت میں پیش ہوئے انہوں نے عدالت کو بتایا کہ انکے چار بچے معذور ہیں لیکن ایک کو بھرتی کیا گیا ہے جس پر چیف جسٹس نے کہا کہ دیگر محکموں میں بھی آسامیاں خالی ہیں سیکریٹریٹ میں بھی انٹرویو دیا لیکن لسٹ نہیں بن رہی جس پر چیف جسٹس نے کہا کہ دو فیصد کوٹے کے تحت ایک سو میں دو آسامیاں ہی ہونگی ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل خیبر پختونخوا محمد عاطف نے عدالت کو بتایا کہ ہائیکورٹ نے آرڈر دیا ہے جو ڈیپارٹمنٹ دو فیصد کوٹے پر عملدرآمد نہیں کریگا دو ہزار جرمانہ جمع کریگا فاضل بینچ نے صوبائی حکومت سے مختلف ڈیپارٹمنٹ میں معذوروں کے خالی آسامیوں اور اس مد میں جمع ہونے والی جرمانہ کی رقم کی رپورٹ طلب کرتے ہوئے کیس کی سماعت 25 فروری تک ملتوی کر دی

مزید : پشاورصفحہ آخر