چین سے آئے طالبعلم میں کرونا وائرس کی علامات ظاہر،ڈاکٹروں کا علاج سے انکار، تہران، ریاض کا بیچنگ کیساتھ ملکر وباء کیخلاف کام کرنے کا عزم

          چین سے آئے طالبعلم میں کرونا وائرس کی علامات ظاہر،ڈاکٹروں کا علاج سے ...

  



کراچی،خانیوال،پشاور، اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک،نیوزایجنسیاں) چین سے واپس آنیوالے پاکستانی طالبعلم میں کرونا وائرس کا شبہ ظاہر کیا گیا ہے۔سندھ کے شہر خیرپور کا رہائشی شاہ زیب علی راہوجو ہفتے کے روز چین سے قطر کے راستے کراچی پہنچا تھا جہاں ایئرپورٹ پر اسے کلیئر کردیا گیا تاہم اس کی طبیعت بگڑگئی اور کورونا وائرس کی علامات ظاہر ہورہی ہیں۔ سول ہسپتال پیر جو گوٹھ کے ڈاکٹرز اور عملہ شاہزیب میں وائرس کا شبہ ظاہر ہونے کے بعد علاج سے انکار کرتے ہوئے وارڈ چھوڑ کر چلے گئے۔ ڈاکٹرزکے مطابق ہمارے پاس اس مرض کا نہ علاج ہے اور نہ ہی ٹیسٹنگ کٹس ہیں۔سندھ میں علاج نہ ہونے پرشاہزیب نے اسلام آباد جانے کی کوشش کی تاہم ملتان ٹول پلازہ پر پولیس کی بھاری نفری نے شاہزیب کو روکتے ہوئے واپس سندھ بھیج دیا ہے۔ شاہ زیب کو خیرپور کے علاقے گمبٹ کے اسپتال پہنچا دیا گیا ہے جہاں اس کی طبیعت بدستور خراب ہے۔شاہزیب پچھلے پانچ ماہ سے چین کی یونیورسٹی میں زیر تعلیم تھا اور چین سے سکریننگ کلیئر ہونے کے بعد قطر ایئرپورٹ پر اس کی طبیعت خراب ہوئی۔ شاہزیب اور اس کے بھائی نے سوشل میڈیا پر ویڈیو بھی شیئر کی ہے۔ادھرپاکستان اور چین کے درمیان فلائٹ آپریشن بحال ہونے کے بعد ایئر چائنا کی پرواز سے 36مسافر کراچی پہنچ گئے ہیں۔چین سے پاکستان آنے والے شہریوں کو سکریننگ کے بعد گھروں میں جانے کی اجازت دی گئی ہے، اب تک مختلف پروازوں سے 300 سے زائد پا کستانی وطن واپس پہنچ چکے ہیں۔علاوہ ازیں چین میں مقیم پاکستانی طالبعلم نے پاکستان نہ آنے کا فیصلہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ میں نہیں چاہتا میری وجہ سے پاکستان میں کرونا وائرس پھیل جائے۔تفصیلات کے مطابق چین کے شہر کومنگ میں مقیم میاں چنوں کے نواحی گاؤں 127پندرہ ایل کے رہائشی پی ایچ ڈی کے طالب علم شیخ محبوب نے ویڈیو بیان جاری کیا جس میں طالب علم نے پاکستان نہ آنے کا فیصلہ کرتے ہوئے بتایا کہ میں نہیں چاہتا کہ پاکستان میں میری وجہ سے وائرس پھیل جائے اس لئے پاکستان نہیں جاؤں گا،پوری قوم کروناوائرس کے خاتمہ کیلئے دعا کرے جلد ہی یہ مسئلہ حل ہوجائے گا۔ خیبر پختونخواحکومت نے کورونا وائرس کے خطرے کے پیشِ نظر صوبے میں ایمرجنسی نافذ کردی محکمہ بحالی و آباد کاری خیبر پختونخوا کی جانب سے کورونا وائرس کے پیشِ نظر ایمرجنسی کے حوالے سے جاری کردہ اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ ہمسایہ ملک ہونے کے ناطے چین سے بِلاروک ٹوک مسافروں کا آنا جا نا رہتا ہے اور یہی وجہ ہے کہ متعلقہ ادارے احتیاطی تدابیر سمیت تمام تر ممکنہ اقدامات کو فوری یقینی بنائیں۔وفاقی سیکریٹری صحت نے کہاہے کہ ملک بھر سے 8 مشتبہ کیسز این آئی ایچ کو موصول ہوئے ہیں، پاکستان میں کسی ایک بھی شہری میں کورونا وائرس کی تشخیص نہیں ہوئی۔

بیجنگ،ریاض،تہران،واشنگٹن(مانیٹرنگ ڈیسک،نیوزایجنسیاں)ایرانی وزیرخارجہ جواد ظریف نے کہا ہے کہ ایران نوول کرونا وائرس کی وبا کے خاتمے کیلئے چین کیساتھ ملککرکام کرنے کا خواہاں ہے۔چینی سٹیٹ قونصلر اور وزیر خارجہ وانگ یی سے ٹیلیفونک گفتگو میں جواد ظریف نے کہا کہ عالمی برادری کی جانب سے بڑے پیمانے پر تسلیم کیاجارہا ہے کہ چینی حکومت نے ذمہ دارانہ اور شفاف انداز میں اس وبا کے خاتمے کیلئے بروقت اورثابت قدمی کے ساتھ اقدامات اٹھائے ہیں جس سے ناصرف چین میں اس وبا کوبے قابو ہونے بلکہ بیرون ملک پھیلنے سے بھی روکاگیا ہے۔ظریف نے کہاکہ ایران اس وبا کو کچھ مغربی ممالک کی جانب سے اپنے مقصد کے لئے استعمال کرنے کی کوششوں کی سختی سے مخالفت کرتا ہے اور اسے یقین ہے کہ چینی حکومت اور عوام موجودہ مشکل صورتحال پر جلد قابو پالیں گے۔دوسری طرف سعودی وزیر خارجہ فیصل بن فرحان آل سعود نے کہا ہے کہ چین آخرکار نوول کرونا وائرس کے خلاف جنگ میں کامیاب ہوگا۔ٹیلیفونک گفتگو میں فیصل نے کہا کہ سعودی حکومت اور عوام اس وبا کیخلاف جنگ میں چین کی حمایت کرتے ہیں۔فیصل نے کہا کہ سعودی عرب اس وائرس کو پھیلنے سے روکنے کے لئے چین کے ٹھوس اقدامات کوسراہتا ہے اور اس وبا کے تدارک اور کنٹرول کے لئے چین کی جانب سے ذمہ داری کا مظاہرہ کرنے کاانتہائی معترف ہے۔اس موقع پر وانگ نیاس مرض کے خلاف کوششوں کے نازک مرحلہ میں حمایت کرنے پر سعودی عرب کا شکریہ ادا کرتے کہا کہ چین نے اس وبا کے خلاف ایک ملک گیر سسٹم قائم کیا ہے جس میں تمام شعبہ ہائے زندگی کے لوگ شامل ہیں۔دوسری طرف چین نے امریکہ سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ کرونا وائرس سے پھیلنے والی نمونیا کی وبا کو پرسکون طور پرمعروضی،شفاف اورمعقول انداز میں دیکھے اور اس وبا کیخلاف جنگ میں چین اورعالمی برادری کا احترام کرتے ہوئے تعاون کرے۔چینی وزارت خارجہ کی ترجمان نے کہا کہ چینی حکومت اور عوام نے اس وبا ء کے خلاف کوئی کسر اٹھانہیں رکھی اور اس وبا ء کو پھیلنے سے روکنے کیلئے اٹھائے گئے اقدامات کے مثبت نتائج سامنے آرہے ہیں۔دوسری طرف چین میں نوول کورونا وائرس کے باعث مزید 64افراد ہلاک اور3235نئے کیسز سامنے آگئے جس کے بعد ہلاکتوں کی مجموعی تعداد425 اورمتاثرہ افراد کی تعداد20ہزار438ہوگئی جن میں سے 2788افراد کی حالت تشویشناک ہے۔

چین

مزید : صفحہ اول