ضلع سانگھڑ میں درختوں کی کٹائی کی شکایات پر محکمہ ماحولیات کا نوٹس

  ضلع سانگھڑ میں درختوں کی کٹائی کی شکایات پر محکمہ ماحولیات کا نوٹس

  



کراچی(اسٹاف رپورٹر)ضلع سانگھر میں درختوں کی کٹائی کے بڑھتے ہوئے واقعات پر عوامی، اخباری و نشریاتی شکایات اوربعد ازیں انہیں روکنے کے لیے محکمہ داخلہ سندھ کی جانب سے ضلع بھر میں دفعہ ایک سو چوالیس کے نفاذ کے بعد محکمہ ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی، حکومت سندھ نے بھی اپنے فیلڈ کے دفاتر کو درختوں کی حفاظت یقینی بنانے کے لیے ضروری اقدامات لینے کی ہدایات جاری کردی ہیں۔وزیرا علی سندھ کے مشیر برائے قانون، ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب کی اس ضمن میں سختی سے ہدایات ہیں کہ ماحولیاتی خلاف ورزی کے مرتکب عناصر سے کسی قسم کی رعایت نہ برتی جائے اور ماحولیات کی حفاظت اور ماحولیاتی کاوشوں کے فروغ کے لیے ہر ممکن معاونت کی جائے۔محکمہ ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی نے اس حوالے سے اپنے ذیلی ادارے، ادارہ تحفظ ماحولیات حکومت سندھ کو ہدایات جاری کرتے ہوئے کہا ہے ضلع سانگھڑ میں بالخصوص اور صوبے بھر میں بالعموم درختوں کی کٹائی کی شکایات پر اپنے دائرہ اختیار کے مطابق فوری ایکشن لیا جائے کیونکہ درختوں کی سا لمیت اور نشونما بڑھتی ہوئی فضائی آلودگی کی تلافی کے لیے انتہائی ضروری ہے۔اس حوالے سے ای پی اے سندھ کے کراچی، حیدرآباد، میرپورخاص، لاڑکانہ اور سکھر کے علاقائی دفاتر کے لیے ہدایات جاری کرنے کا کہہ دیا گیا ہے تاکہ ان کے فیلڈ افسران مختلف قسم کی ترقیاتی، صنعتی اور طبی سرگرمیوں کے دوران ہونے والی ممکنہ آلودگی کی روک تھام کے اقدامات کے ساتھ ساتھ درخت کاٹنے والے عناصر پر بھی نظر رکھیں اور اس ضمن میں ملنے والی شکایات کو سندھ کے قانون برائے تحفظ ماحولیات کے مطابق ترجیحی بنیادوں پر نمٹائیں۔واضح رہے کہ درختوں کی کٹائی کی روک تھام براہ راست اپنے دائرہ اختیار میں نہ ہونے کے باوجود، محکمہ ماحولیات اور اس کا ذیلی ادارہ ای پی اے سندھ صوبائی ماحولیاتی قوانین کے مطابق درختوں کی حفاظت اور شجرکاری کے فروغ کے لیے وقتا فوقتا اقدامات لیتا رہتا ہے اور ماحولیاتی جائزے کے لیے جمع کرائے گئے ترقیاتی منصوبوں کی ماحولیات منظوری کو بھی منصوبے کے ایریا میں زیادہ سے زیادہ شجرکاری سے مشروط کرتا ہے۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر