کورونا کے شکار بس ڈرائیور نے اپنی اہلیہ کو موت کے گھاٹ اتار دیا لیکن دراصل خاتون نے اسے کیا کہا تھا؟ جان کر آپ کو بھی دکھ ہوگا

کورونا کے شکار بس ڈرائیور نے اپنی اہلیہ کو موت کے گھاٹ اتار دیا لیکن دراصل ...
کورونا کے شکار بس ڈرائیور نے اپنی اہلیہ کو موت کے گھاٹ اتار دیا لیکن دراصل خاتون نے اسے کیا کہا تھا؟ جان کر آپ کو بھی دکھ ہوگا

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) برطانیہ میں ایک خاتون نے اپنے شوہر کو کورونا وائرس ہونے پر اسے گھر سے نکل جانے کو کہہ دیا جس پر شوہر نے غصے میں آ کر بہیمانہ طریقے سے خاتون کو موت کے گھاٹ ہی اتار ڈالا۔ڈیلی سٹار کے مطابق قتل کی یہ ہولناک واردات گزشتہ سال اپریل میں لاک ڈاﺅن کے دوران ہوئی۔ 66سالہ حسین ایگل نامی قاتل میں کورونا وائرس کی علامات دیکھ کر اس کی 57سالہ بیوی مریم اسماعیل نے اسے کہا کہ وہ گھر سے چلا جائے، جس پر وہ مشتعل ہو گیا اور اس پر حملہ کر دیا۔

رپورٹ کے مطابق ملزم بس ڈرائیور تھا جبکہ مقتولہ ایک سکول میں صفائی ورکر کے طور پر کام کرتی تھی۔ قتل کی یہ واردات ان کے شمالی لندن کے علاقے ایڈمونٹن میں واقع ان کے گھر میں ہوئی۔ پراسیکیوٹرز کی طرف سے اولڈ بیلے کورٹ کو بتایا گیا ہے کہ ”قاتل نے اپنی بیوی پر ہتھوڑے، چھری، برتنوں، پین، میز کی ٹانگ و دیگر چیزوں سے حملہ کیا۔ اس کے ہاتھ جو چیز آتی گئی وہ اس سے مقتولہ کو تشدد کا نشانہ بناتا تھا۔ مقتولہ کے سینے، ٹانگوں، سراور پشت سمیت پورے جسم پر زخموں کے نشانات موجود تھے اور اس کی لاش خون میں لت پت فرش پر پڑی تھی جب پولیس جائے واردات پر پہنچی۔ملزم نے دوران تفتیش بتایا کہ ”میری بیوی نے مجھے کہا کہ باہر نکل جاﺅ اور گلی میں جا کر مرو۔ اس پر مجھے غصہ آ گیا اور میں نے اسے کہا کہ پہلے میں تمہیں ہی قتل کروں گا، چنانچہ میں نے اسے قتل کر دیا۔“

مزید :

ڈیلی بائیٹس -