آسٹریا میں پاکستانی سفارت خانے میں "یوم یکجہتی کشمیر" منایا گیا

آسٹریا میں پاکستانی سفارت خانے میں "یوم یکجہتی کشمیر" منایا گیا
آسٹریا میں پاکستانی سفارت خانے میں
سورس:   twitter/@Abdullahjaam21

  

ویانا(المیر باجوہ)یوم یکجہتی کشمیر  کے موقع پر آسٹریا میں پاکستانی سفارتخانے نے پاکستانی اور کشمیری برادری کے ممبروں کے اشتراک سے یوم یکجہتی کشمیر کے موقع پر ایک ویبنار کا اہتمام کیا۔ پروگرام میں سفیر پاکستان آفتاب احمد کھوکھر نے صدر وزیر اعظم اور وزیر خارجہ پاکستان کے عوام کے نام پیغامات پڑھ کر سنائے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ان پیغامات نے کشمیری عوام کے ساتھ پاکستان کی بھر پور حمایت اور عزم کا اعادہ کیا ہے اور عالمی برادری پر زور دیا ہے کہ وہ اقوام متحدہ کے زیر اہتمام کشمیریوں کو حق خود ارادیت کا حق نہ دینے کے لئے آزادانہ اور غیرجانبدارانہ رائے شماری کا انعقاد کرے۔

 ویانا میں قائم کمیونٹی تنظیموں کی نمائندگی کرنے والے مقررین نے بھی ویبنار سے خطاب کیا۔ انہوں نے غیرقانونی طور پربھارتی مقبوضہ جموں وکشمیر (آئی او او جے کے) میں بھارتی مظالم کی مذمت کی۔  مقبوضہ جموں کشمیر کے عوام کی قربانیوں کو تسلیم کرتے ہوئے انہوں نے کشمیری عوام کی حمایت کا مسلسل اظہار کیا۔  انہوں نے عالمی برادری سے مطالبہ کیا کہ وہ آئی او او جے کے کے حق خودارادیت سے متعلق اقوام متحدہ کی قراردادوں پر عمل درآمد کے عہد کو پورا کریں۔ سابق سفیر حیات مہدی نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ بھارتی عوام کشمیری عوام کے حق میں بات کریں اور آئی او جے کے میں بھارتی مظالم کو روکنے کے لئے ہندوستان کے اندر دباؤ بڑھائیں۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ بھارت مقبوضہ جموں وکشمیر میں مظالم لوٹ مار اور عصمت دری کی اپنی ریاستی پالیسی بند کرے اور کشمیری عوام کے ساتھ اپنا وعدہ پورا کرے۔ اپنے اختتامی کلمات میں سفیر پاکستان کھوکھر نے کہا کہ ہندوتوا کا انتہا پسندانہ نظریہ جنوبی ایشیاء اور اس سے آگے کے امن و استحکام کے لئے سنگین خطرہ ہے۔  انہوں نے کہا کہ یو این ایس سی میں جموں و کشمیر تنازعہ کی بحث نے عالمی امن و سلامتی کے لئے اس کی مطابقت اور اہمیت کی تصدیق کردی ہے۔ انہوں نے عالمی برادری سے مطالبہ کیا کہ وہ مقبوضہ جموں و کشمیر میں انسانیت کے خلاف ہونے والے جرائم کے لئے بھارت کو جوابدہ بنائے اور کشمیریوں پر وحشیانہ ظلم و ستم کو روکنے کے لئے اپنا کردار ادا کرے اور یو این ایس سی کی قراردادوں کے ذریعہ ان سے کیے گئے عہد کا احترام کرے۔

مزید :

بین الاقوامی -