مسافر اور آمدن کم، خرچہ زیادہ، اورنج ٹرین پراجیکٹ سفید ہاتھی بن گیا

مسافر اور آمدن کم، خرچہ زیادہ، اورنج ٹرین پراجیکٹ سفید ہاتھی بن گیا
مسافر اور آمدن کم، خرچہ زیادہ، اورنج ٹرین پراجیکٹ سفید ہاتھی بن گیا

  

لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن )اورنج ٹرین کی آمدن بجلی کا خرچہ پورا کرنے سے بھی قاصرہے،اورنج ٹرین کے مسافروں سے کرائے کی مد میں28کروڑ کی آمدن جبکہ35کروڑ روپے کی بجلی خرچ ہوگئی جبکہ دیگر اخراجات اس کے علاوہ ہیں۔

اورنج ٹرین کے مسافروں میں بھی  روز بروز کمی واقعہ ہورہی ہے،جس کے باعث مسافروں کے کرائے میں کمی کی سمری بھی وزیراعلی کو بھجوائی گئی ہے،جس میں تجویز دی گئی ہے کہ کرائے کو 10 روپے مزید کم کیا جائے۔ماس ٹرانزٹ اتھارٹی نے اورنج ٹرین کا کرایہ 40 سے کم کرکے 30 روپے کرنے کی تجویز دی ہے۔ایکسپریس نیوز کے مطابق اورنج لائن میٹرو ٹرین منصوبے پر روزانہ کی بنیاد پر مسافروں کی تعداد میں کمی ہو رہی ہے جس کی وجوہات میں کورونا وائرس اور ٹرین ٹریک کے نیچے نجی ٹرانسپورٹ کا چلنا شامل ہے۔

 دستاویزات کے مطابق 25اکتوبر 2020سے لے کر تین فروری 2021تک اورنج لائن میٹروٹرین پر70لاکھ پانچ ہزار 894مسافروں نے سفرکیا،جس سے اورنج لائن میٹروٹرین کو کرایہ کی مد میں28کروڑ23لاکھ 576روپے آمدن ہوئی جبکہ ٹرین نے جولائی سے دوجنوری2021تک 35کروڑ35لاکھ 39ہزار837روپے کی بجلی استعمال کی ۔

مزید :

قومی -