محکمہ صحت نے ڈرگ ٹیسٹنگ لیبارٹری کو بند کر دیا،ٹیسٹوں کی رپورٹس زیر التواء

محکمہ صحت نے ڈرگ ٹیسٹنگ لیبارٹری کو بند کر دیا،ٹیسٹوں کی رپورٹس زیر التواء

لاہور(جاوید اقبال )محکمہ صحت نے ڈرگ ٹیسٹنگ لیبارٹری کو بند کردیا ہے جس کے باعث ہسپتالوں کی طرف سے ٹیسٹنگ کے لئے بھجوائی جانے والی ادویات کے نمونہ جات کی رپورٹس التواء میں چلی گئی ہیں ۔لیبارٹری بند کرنے کے بعد سرکاری و غیر سرکاری ہسپتالوں اور کمپنیوں سے کہاگیا ہے کہ وہ ادویات کے نمونہ جات لیبارٹری کے دوبارہ چالوہونے تک فیصل آباد ،ملتان میں قائم ڈرگ ٹیسٹنگ لیبارٹر ی میں تجزیے کے لئے بھجوا سکتے ہیں ۔لیبارٹری اچانک بند کرنے سے ہزاروں ادویات کے نمونہ جات کی ٹیسٹنگ نہ ہونے سے ڈاکٹرزسرکاری ادویات اپنے مریضوں کے لئے استعمال نہیں کرسکیں گے ۔اس حوالے سے ڈی ٹی ایل کی انتظامیہ کا کہنا ہے کہ لیبارٹری کو سالانہ مرمت کے لئے بند کیا گیا ہے جو دو ماہ تک بند رہ سکتی ہے ۔بتایا گیا ہے کہ ڈرگ ٹیسٹنگ لیبارٹری لاہور کو سالانہ مرمت کے نام پر دو ماہ کے لئے بند کردیا گیا ہے ۔لیبارٹری کی بندش سے قبل سرکاری ہسپتالوں کی طرف سے ٹیسٹنگ کے لئے بھجوائی گئی ادویات کے نمونہ جات کی رپورٹس بھی جاری نہیں کی گئیں اور نہ ہی ڈرگ انسپکٹروں کی طرف سے بھجوائے گئے جعلی اور غیر معیاری ادویات کے سیمپل کی رپورٹس تیار کرکے دی گئی ہیں ۔واضح رہے کہ کوئی ہسپتال خریدی گئی ادویات کا مریضوں پر استعمال اتنی دیر نہیں کرسکتا جب تک ڈی ٹی ایل ادویات کی صحت اور معیار کے حوالے سے رپورٹس جاری نہیں کردیں مگر جہاں سروسز ہسپتال ،پی آئی سی ، جناح ،جنرل ،میو اور گنگا رام سمیت دیگر سرکاری ہسپتالوں کی طرف سے ڈی ٹی ایل کے لئے سینکڑوں کیسز جمع کردیئے گئے تھے مگر لیبارٹری نے ان کی رپورٹس جاری کرنے کی بجائے لیبارٹری میں بند کردی جس کے باعث سرکاری ہسپتالوں کے مریضوں کو بڑی تعداد میں ادویات سے محروم ہونا پڑے گا ۔اس حوالے سے لیبارٹری انتظامیہ کا کہنا ہے کہ فیصل آباد اور ملتان میں ڈی ٹی ایل موجود ہیں ۔

مزید : میٹروپولیٹن 1