ٹیکسٹائل پاور اور صنعتی سیکٹر کیلئے گیس کی قیمتوں میں ایک مرتبہ پھر اضافے کا امکان

ٹیکسٹائل پاور اور صنعتی سیکٹر کیلئے گیس کی قیمتوں میں ایک مرتبہ پھر اضافے کا ...

 لاہور( اپنے نامہ نگار سے) گیس کی قیمتوں میں ایک مرتبہ پھر اضافہ کیاجا رہا ہے۔ ٹیکسٹائل سیکٹر ، پاور سیکٹر اور صنعتی سیکٹر میں گیس مہنگی جبکہ سی این جی سیکٹر میں ایل این جی سستے داموں پر ملے گی، تاہم گھریلو صارفین کیلئے گیس کی قیمتوں میں اضافے کے حوالے سے فیصلہ نہیں کیا جا رہا ہے ۔ اس حوالے سے چیئرمین اوگرا سعید احمد خاں نے کہا ہے کہ اگلے دس دنوں تک گیس کی قیمتوں میں اضافہ یا نئی قیمتوں کے تعین کے حوالے سے فیصلہ کرلیا جائے گا۔ اس سلسلہ میں گزشتہ روز لاہور میں ری گیسولین لیکوفائیڈ نیچرل گیس کی قیمتوں کا تعین کرنے کے حوالے سے چیئرمین اوگرا سعید احمد خاں کی زیرصدارت عوامی سماعت ہوئی،صنعت کار، پاکستان اسٹیٹ آئل، سوئی سدرن اور سوئی ناردرن گیس کے ایم ڈی عامر طفیل، سینئر جنرل منیجر سہیل گلزار، جی ایم بلنگ فیصل اقبال سمیت گیس کمپنی کے حکام نے بھی شرکت کی اور قدرتی گیس کی بجائے زیادہ تر ایل این جی کی درآمدگی پر آنے والے اخراجات پر بحث ہوئی۔ اس موقع پر۔آر ایل این جی کی مستقل قیمت طے کرنے کے لئے صارفین اور سٹیک ہولڈرز کی عوامی سماعت لاہور کے مقامی ہوٹل میں ہوئی، اس موقع پر صنعت کاروں اور کمرشل صارفین نے موقف اختیار کیا کہ گیس کمپنیاں اپنی جیب سے ایک روپے کی سرمایہ کاری نہیں کرتی ہیں اور ان کے گیس تقسیم کرنے کے موجودہ مارجنز بہت زیادہ ہیں جنہیں کم کیا جائے، گیس کمپنیوں اور پی ایس او نے موقف اختیار کیا کہ موجودہ مارجنز میں سروسز فراہم کرنا انتہائی مشکل ہو گیا لہذا مارجنز میں دس فی صد اضافہ کیا جائے۔ چیئرمین اوگرا سعید احمد نے دونوں فریقین کے دلائل سنے ، میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ سات اکتوبر 2015ء کو گیس کی عارضی قیمت آٹھ عشاریہ چھیاسٹھ ڈالر فی ایم ایم بی ٹی یو مقررکی گئی اور مستقل قیمت کا تعین کرنے کے لئے ملک بھر میں عوامی سماعت کی جا رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ فریقین کا موقف سن کر آٹھ سے دس دن میں عوامی مفاد کو مد نظر رکھ کر آر ایل این جی کی مستقل قیمت کا فیصلہ کریں گے۔

گیس

مزید : علاقائی