داعش میں شامل ہونے والے شہریوں کو سعودی حکومت نے بڑی پیشکش کردی، واضح اعلان کردیا

داعش میں شامل ہونے والے شہریوں کو سعودی حکومت نے بڑی پیشکش کردی، واضح اعلان ...
داعش میں شامل ہونے والے شہریوں کو سعودی حکومت نے بڑی پیشکش کردی، واضح اعلان کردیا

  

ریاض(مانیٹرنگ ڈیسک) سعودی عرب نے شام میں لڑنے والی شدت پسند تنظیم داعش میں شامل اپنے شہریوں کے لیے ایک بڑی پیشکش کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ ”داعش میں شامل تمام سعودی شہری بغداد میں واقع سعودی سفارتخانے آ کر ہتھیار ڈال دیں، جو بھی سرنڈر کرے گا اس کے ساتھ عدالتی کارروائی میں نرمی برتی جائے گی۔“ بغداد میں سعودی عرب نے اپنا سفارتخانہ 25سال بعد دوبارہ کھولا ہے اور یہ اعلان عراق میں تعینات سعودی سفیر کی طرف سے سامنے آیا ہے۔سعودی سفیر کا کہنا تھا کہ”سرنڈر کرنے والے سعودی شہریوں کو سفارتخانے میں تمام ضروری سہولیات بہم پہنچائی جائیں گی۔“ انہوں نے عراق میں دوبارہ سفارتخانہ کھولنے کے متعلق گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ”سفارتخانہ دوبارہ کھلنے سے دونوں ملکوں کے تعلقات بہتر ہوں گے اور دہشت گردی کے خلاف لڑائی میں معاونت ملے گی۔“واضح رہے کہ سعودی عرب نے 1990ءمیں اس وقت عراق میں اپنا سفارتخانہ بند کر دیا تھا جب عراقی صدر صدام حسین نے کویت پر جنگ مسلط کی تھی اور اب ایسے وقت میں اسے دوبارہ کھول دیا ہے جب ایران کے ساتھ اس کے سفارتی تعلقات ختم ہو چکے ہیں۔

مزید : بین الاقوامی