مقبوضہ کشمیر، پلوامہ میں 3تازہ شہادتوں کیخلاف مکمل ہڑتال، بھارتی پارلمینٹ میں جموں ، کشمیر میں صدارتی راج کی منظوری

مقبوضہ کشمیر، پلوامہ میں 3تازہ شہادتوں کیخلاف مکمل ہڑتال، بھارتی پارلمینٹ ...

سری نگر،نئی دہلی (کے پی آئی،این این آئی)جنوبی کشمیر کے پلوامہ ضلع میں تازہ شہادتوں کے خلاف جمعہ کو ہڑتال سے کاربار زندگی معطل ہو کر رہ گیا جبکہ ترال کے گلشن پورہ نامی علاقے میں شہید ہونے والے نوجوانوں توصیف احمد ٹھوکر ، زبیر احمد بٹ ، شکور احمد پرے کی نماز جنازہ ادا کرنے کے بعد سپردخاک کر دیا گیا ۔ تینوں نوجوانوں کا تعلق حزب المجاہدین سے تھا۔توصیف احمد ٹھوکر اور زبیر احمد بٹ کو چرسو اونتی پورہ میں سپرد خاک کر دیا گیا نماز جنازہ میں ہزاروں شہریوں نے شرکت کی ۔اسی طرح لاری بل ترال میں بھی شکور احمد پرے کی آخری رسومات میں لوگوں کی ایک بھاری تعداد نے حصہ لیا۔ شکور کی بھی کئی بار نماز جنازہ ادا کی گئی جس کے دوران وہاں نوجوان نمودار ہوئے اور انہوں نے ہوا میں گولیوں کے کئی راؤنڈ چلائے۔ مکمل ہڑتال کی وجہ سے معمولات ٹھپ ہیں اورحکام نے انٹرنیٹ سروس معطل رہی شہید ہونے والا نوجوان توصیف اعلی تعلیم یافتہ تھا جس نے ریاضی کے مضمون میں ایم ایس اسی کرنے کے علاوہ بی ایڈ کیا تھا۔ مشتعل نوجوانوں نے بٹہ گنڈ اور گلشن پورہ کے مقامات پر فورسز کی ٹکڑیوں پر شدید سنگ باری کی۔اس دوران فورسز اہلکاروں نے نوجوانوں کو منتشر کرنے کیلئے آنسو گیس کے گولوں اور چھروں کا استعمال کیا ۔مکمل ہڑتال کی وجہ سے ترال اور آری پل میں مکمل ہڑتال کی وجہ سے معمولات کی زندگی بری طرح متاثر رہی ۔جس دوران دونوں تحاصیل میں تمام طرح کے کار باری ادارے سرکاری و نجی دفاتر مکمل بند رہے ۔ دریں اثنامقبوضہ کشمیر میں جامع مسجد سری نگر کی بے حرمتی کیخلاف جمعہ کو یوم تقدس منایا گیا۔ مختلف مذہبی اور حریت پسند جماعتیں واقعے کیخلاف مشترکہ طور پر آواز اٹھائی ۔مشترکہ آزادی پسند قیادت سید علی گیلانی، میرواعظ ڈاکٹر محمد عمر فاروق اور محمد یسین ملک نے یوم تقدس منانے کا اعلان کیا تھا،اطلاعات کے مطابق جے کے ایل ایف کے رہنماء یاسین ملک کو ان کے دفتر سے گرفتار کر لیا گیا ہے تاکہ وہ مظاہرین کی قیادت نہ کر سکیں۔دریں اثناء بھارتی پارلیمنٹ نے جموں وکشمیر میں صدارتی راج کے نفاذ کی منظوری دے دی ہے ۔بھارتی پارلیمنٹ کے ایوان زیریں لوک سبھا اور اسکے بعد راجیہ سبھا میں بحث کے بعد منظوری دی گئی ۔ جموں و کشمیر میں گورنر راج کے چھ ماہ مکمل ہونے کے بعد گورنر کی سفارش پر گذشتہ 20دسمبر کو صدر راج نافذ کیا گیا تھا ۔دوسری جانب ریاست جموں وکشمیر کے دونوں اطراف سمیت دنیا بھر میں بسنے والے کشمیری عوام آج( ہفتے کو)یوم حق خودارادیت منائیں گے۔5جنوری 1949 کو اقوام متحدہ نے استصواب رائے کے ذریعے حق کشمیریوں کوحق خودارادیت دینے کا وعدہ کیا تھا ۔نصف صدی گزرنے کے بوجود کشمیری عوام سے کیا گیا وعدہ پورا نہیں کیا گیا۔یوم حق خودارادیت کے موقع پرریاست جموں وکشمیر کے دونوں طرف جلسے جلوس،ریلیاں،دھرنے اوراحتجاجی مظاہرے کیے جائیں گے تاکہ عالمی برادری کو اپنا وعدہ یاد دلا سکیں۔

کشمیر

مزید : علاقائی


loading...