مقبوضہ کشمیر ، بھارتی فوج کے ہاتھوں پلوامہ میں 3نوجوان شہید ، علاقہ میں مظاہرے، فورسز کی فائرنگ ، متعدد کشمیری زخمی

مقبوضہ کشمیر ، بھارتی فوج کے ہاتھوں پلوامہ میں 3نوجوان شہید ، علاقہ میں ...

سرینگر(این این آئی)مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوجیوں نے ریاستی دہشت گردی کی تازہ کارروائی کے دوران آج ضلع پلوامہ میں3نوجوان شہید کر دیے۔کشمیر میڈیا سروس کے مطابق فوجیوں نے نوجوانوں کو ضلع میں ترال کے علاقے گلشن پورہ میں محاصرے اور تلاشی کی کارروائی کے دوران شہید کیا۔ نوجوانوں کی شہادت پر علاقے میں زبردست مظاہرے شروع ہو گئے۔بھارتی فوجیوں اور پولیس اہلکاروں نے مظاہرین کو منتشر کرنے کیلئے گولیاں اور پیلٹ چلائے جس کے باعث متعدد مظاہرین زخمی ہو گئے۔شہید نوجوانوں کی شناخت توصیف احمد ٹھوکر، شکور اور اظفرکے طورپر ہوئی تینوں کا تعلق پلوامہ کے مختلف علاقوں سے تھا ۔ توصیف احمد نے ایم ایس سی میتھ کی ڈگری حاصل کی تھی۔شہادتوں پر علاقے میں زبردست بھارت مخالف مظاہرے کئے گئے ۔ ترال قصبے میں گلشن پورہاور باٹا گنڈ کے علاقوں بھارتی فوجیوں کی طرف سے مظاہرین پر طاقت کے وحشیانہ استعمال سے بارہ سے زائد نوجوان زخمی ہو گئے ،جنہیں ہسپتال میں داخل کردیاگیا ہے ۔ اس سے قبل ترال میں ایک حملے کے دوران ایک بھارتی فوجی ہلاک اور تین زخمی ہو گئے تھے ۔آخری اطلاعات تک علاقے میں مظاہرین اور بھارتی فورسز اہلکاروں کے دوران جھڑپوں کا سلسلہ جاری تھا۔ قابض انتظامیہ نے لوگوں کوتازہ ترین صورتحال کے بارے میں ایک دوسرے کو معلومات کی فراہمی سے روکنے کیلئے ترال اور اونتی پورہ کے علاقوں میں موبائل فون انٹرنیٹ سروس معطل کر دی ہے۔کشمیر میڈیاسروس کے مطابق سیدعلی گیلانی نے سرینگر میں جاری ایک بیان میں شہادتوں پر احتجاج کرنے والے پر امن مظاہرین پر بھارتی فورسز کی طرف سے گولیوں،پیلٹ گنز اور آنسو گیس سمیت طاقت کے وحشیانہ استعمال کی بھی شدید مذمت کی ۔ انہوں نے کہاکہ بھارتی فوجی ہمارے نوجوانوں کا قتل عام کر رہے ہیں اور اسکے خلاف احتجاج کرنیوالوں کو ظلم و بربریت اور سفاکیت کا نشا نہ بنا کر ریاستی دہشت گردی کی بدترین مثال قائم کی جارہی ہے ۔ ادھرمیر واعظ عمر فاروق کی سرپرستی میں قائم حریت فورم کے ترجمان نے ایک بیان میں ترال میں بھارتی فوجیوں کے ہاتھوں شہید ہونیوالے نوجوانوں کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہاکہ شہداء کی قربانیوں کی وجہ سے مسئلہ کشمیر عالمی سطح پر مرکز نگاہ بن گئی ہے اور ایک فیصلہ کن مرحلے میں داخل ہو گئی ہے ۔ ترجمان نے بھارتی فوجیوں کی طرف سے ترال میں پر امن مظاہرین پر طاقت کے وحشیانہ استعمال کی شدید مذمت بھی کی ہے ۔ حریت رہنماؤں اشرف صحرائی ،بلال احمد صدیقی ۔ محمد یاسین عطائی اور پیروان ولایت کے سربراہ مولانا سبط محمد شبیر قمی اور پیپلزپولٹیکل فرنٹ نے بھی اپنے الگ الگ بیانات میں شہید نوجوانوں کو زبردست خراج عقیدت پیش کیا ہے ۔ دریں اثناء مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فورسز کی جانب سے جامع مسجد سری نگر کی بے حرمتی کے خلاف یومِ تقدّس منایاگیا ۔حریت رہنما میر واعظ عمر فاروق نے مقبوضہ وادی میں جمعہ کو یومِ تقدّس منانے کا اعلان کیا تھا۔دوسری جانب بھارتی فورسز نے جموں و کشمیر لبریشن فرنٹ کے چیئرمین یاسین ملک کو مظاہروں کی قیادت سے روکنے کے لیے ان کے دفتر سے گرفتار کرلیا۔اس سے قبل اپنے ایک بیان میں یاسین ملک کا کہنا تھا کہ عالمی برادری کو بھارتی فورسز کی جانب سے کشمیری عوام کے استحصال کا نوٹس لینا چاہیے۔ لبریشن فرنٹ کے ترجمان نے سرینگر میں جاری ایک بیان میں کہاہے کہ پولیس نے پارغی کے آبی گذر میں واقع دفتر پر چھاپہ مار کر یاسین لک کو گرفتار کرلیا۔ انہیں کوٹھی باغ پولیس اسٹیشن میں نظربند کیاگیا ہے ۔

کشمیر

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر


loading...