کے پی کابینہ میں اکھاڑ پچھاڑ،2نئے وزراء شامل،میٹرک پاس وزیر تعلیم

  کے پی کابینہ میں اکھاڑ پچھاڑ،2نئے وزراء شامل،میٹرک پاس وزیر تعلیم

  



پشاور(نیوزایجنسیاں) وزیر اعلی خیبرپختونخوا نے صوبائی کابینہ کے بعض اراکین کی ناقص کارکردگی پر عدم اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے صوبائی کابینہ میں توسیع اور مختلف محکموں کے قلمدان تبد یل کر دیئے۔ صوبائی وزیر صحت‘ مشیر تعلیم‘ وزیر معدنیات کے قلمدان تبدیل کر دیئے گئے جبکہ صوبائی کابینہ میں دو نئے وزراء اور آٹھ معاونین خصوصی کو بھی شامل کر لیا گیا ہے۔ ذرائع کے مطابق وزیر اعلی خیبرپختونخوا محمود خان کو صوبائی وزراء کے رویئے سے کافی شکایات موصول ہو چکی ہیں انہی شکایات اور صوبائی وزراء کی مایوس کن اور ناقص کارکردگی کو مدنظر رکھتے ہوئے انہوں نے صوبائی کابینہ میں ردو بدل کا فیصلہ کیا ہے وزیر اعلیٰ خیبر پختونخواہ نے مختلف 14محکموں کے قلمدان تبدیل کر دیئے ہیں۔جن میں وزیر صحت، مشیر تعلیم اور وزیر معدنیات کے قلمدان شامل ہیں۔ اسی طرح 8 معاونین خصوصی اور 2 نئے وزراء کو بھی صوبائی کابینہ میں شامل کیا گیا ہے۔ان 2 نئے صوبائی وزراء میں سے ایک وزیراقبال شا ہ محمد کو قبائلی ضلع سے لیا گیا ہے اقبال شاہ کا تعلق شمالی وزیرستان سے ہے صوبائی وزیر اطلاعات خیبر پختون خواہ شو کت یوسفزئی نے صوبائی کابینہ میں توسیع وردوبدل کی تصدیق کر دی ہے شوکت یوسفزئی کے مطابق شمالی وزیرستان لیئے گئے نئے وزیر اقبال شاہ کو وزیر ریلیف اور شاہ محمد کو وزیر ٹرانسپورٹ کا قلمدان دیدیا گیا ہے خلیق الرحمن کو وزیراعلیٰ خیبر پختون خواہ کا مشیر برائے ھائیر ایجوکیشن کمیشن بنا یا گیا ہے اسی طر ح عارف احمد زئی کو معدنیات اور غزن جمال کو ایکسائز کا محکمہ دیا گیا ہے وزیر بلدیات شہرام ترکئی کا قلمدان تبدیل کر کے انہیں وزیر صحت بنایا گیا ہے اور وزیر صحت ہشام انعام اللہ کی وزارت تبدیل کر کے انہیں سماجی بہبود کا محکمہ دیا گیا ہے۔ اکبر ایوب خان سے سی اینڈ ڈبلیو کا محکمہ واپس لے کر انہیں محکمہ تعلیم دیا گیا ہے مشیر تعلیم ضیاء اللہ بنگش کا قلمدان تبدیل کر کے انفارمیشن ٹیکنالوجی کا محکمہ دیا گیا ہے۔ خلیق الرحمان کو وزیراعلی کا مشیر برائے ہایئر ایجوکیشن کا قلمدان سونپا گیا ہے، جبکہ عارف احمد زئی، شفیع اللہ، ریاض خان، ظہور شاکر،وزیرزادہ، احمد خان سواتی، غزن جمال اور تاج محمد معاونین خصوصی ہوں گے۔ وزیر زادہ چترال سے پی ٹی آئی کے اقلیتی رکن ہیں۔ادھر پی ٹی آئی کی خیبر پختونخوا حکومت نے انوکھا قدم اْٹھاتے ہوئے میٹرک پاس ایم پی اے اکبر ایوب کو محکمہ تعلیم کا قلم دان سونپ دیا۔تحریک انصاف کی حکومت نے انوکھا قدم اٹھاتے ہوئے صوبائی وزیر تعلیم ضیاء اللہ بنگش سے قلمدان واپس لیتے ہوئے ان کی جگہ میٹرک پاس ایم پی اے اکبر ایوب کو محکمہ تعلیم کا قلمدان سونپ دیا۔اسمبلی ریکارڈ میں بھی اکبر ایوب کی تعلیمی قابلیت میٹرک درج ہے، ان کے پاس اس سے پہلے سی اینڈ ڈبلیو کا محکمہ تھا، شمالی وزیرستان سے تعلق رکھنے والے اقبال وزیر بھی میٹرک پاس نکلے۔ اقبال وزیر کو محکمہ ریلیف کی وزارت دی گئی ہے۔دوسری طرف صوبائی وزیر شوکت یوسفزئی کا کہنا ہے کہ پہلے جووزیرتعلیم بنتے تھے ان کی تعلیم مڈل ہوتی تھی۔ وزیرمیں محکمہ چلانے کی صلاحیت ہونی چاہیے۔ان کا کہنا تھا کہ محکمے کو چلانے کے لیے اکبر ایوب کے پاس صلاحیت ہے۔ پانچ سال اکبرایوب بہت بڑا محکمہ چلا چکے ہیں، اکبر ایوب نے بڑے اچھے تعلیمی ادارے سے میٹرک کی۔

مزید : صفحہ اول


loading...