ایرانی جنرل قاسم سلیمانی کو مارنے کیلئے امریکی ڈرون طیارہ کونسے مسلم ملک سے اڑ کر آیا تھا ؟ عرب نیوز نے بڑا دعویٰ کر کے تہلکہ برپا کر دیا

ایرانی جنرل قاسم سلیمانی کو مارنے کیلئے امریکی ڈرون طیارہ کونسے مسلم ملک سے ...
ایرانی جنرل قاسم سلیمانی کو مارنے کیلئے امریکی ڈرون طیارہ کونسے مسلم ملک سے اڑ کر آیا تھا ؟ عرب نیوز نے بڑا دعویٰ کر کے تہلکہ برپا کر دیا

  



لندن (ڈیلی پاکستان آن لائن )امریکہ نے دو روز قبل بغداد میں ڈرون حملے میں ایرانی جنرل قاسم سلیمانی اور عراقی فوجی افسر ابو المہدی المہندس کو قتل کر دیا جس پر ایران نے بدلہ لینے کا اعلان کیاہے تاہم اب عرب نیوز نے امریکی ملٹری کے ذرائع کے حوالے سے دعویٰ کیاہے کہ اس حملے کیلئے ڈرون قطر ایئر بیس سے بھیجا گیا تھا ۔

عرب نیوز کی رپورٹ کے مطابق پاسداران انقلاب کی القدس بریگیڈ کے چیف جنرل قاسم سلمانی اور عراقی فوجی افسر ابو المہدی المہندس کے علاوہ بغداد ایئر پورٹ پر ہونے والے ڈرون حملے میں دیگر پانچ افراد بھی مارے گئے تھے ۔ ایم کیو 9 ریپر ڈرون قطر کی ملٹری اور ایئر فورس بیس العدید سے بھیجا گیا تھا جس نے دونوں گاڑیوں پر ایک ایک ” ہیل فائر آر 9 ایکس ننجا میزائل “ فائر کیے ۔

عرب نیوز نے امریکی ملٹری ذرائع کے حوالے سے دعویٰ کیاہے کہ ڈرون کو امریکی ریاست ” نیواڈا“ کی کریچ ایئر فورس بیس سے کنٹرول کیا جارہا تھا جبکہ بیک اپ کیلئے دوسرا ڈرون قطر میں امریکی سینٹرل کمانڈ ہیڈ کواٹرز سے بھیجا گیا جس کی ضرورت پیش نہیں آئی ۔ریپر ڈرون 1850 کلومیٹر رینج پر 15 ہزار میٹر اونچائی پر میزائلز کے ساتھ اڑنے کی صلاحیت رکھتا ہے ۔

یاد رہے کہ دو روز قبل امریکہ نے بغداد ایئر پورٹ پر ایرانی القدس بریگیڈ کے چیف جنرل قاسم سلیمانی کی گاڑی کو ڈرون حملے میں اڑا دیا جس میں وہ مارے گئے جبکہ ان کے ہمراہ عراقی فوجی افسر ابو المہدی المہندس بھی قتل ہوئے ۔ ایران کی جانب سے اپنے چیف کے قتل کا بدلہ لینے کا اعلان کیا گیا جبکہ سرخ جھنڈا بھی لہرایا گیا ۔

ایرانی جنرل کی میت تہران پہنچا دی گئی ہے جن کی تدفین آبائی شہری کرمان میں منگل کے روز کی جائے گی ۔امریکی صدر نے ایران کو حملہ کرنے کی صورت میں سخت جوابی کارروائی کی دھمکی بھی دی ہے اور آج انہوں نے متعدد ٹویٹس بھی کیے ۔

مزید : بین الاقوامی