رمضان بازاروں میں قیمتیں آسمان سے باتیں کررہی ہیں،وسیم اختر

رمضان بازاروں میں قیمتیں آسمان سے باتیں کررہی ہیں،وسیم اختر

  

لاہور(پ ر)امیر جماعت اسلامی پنجاب وپارلیمانی لیڈرپنجاب اسمبلی ڈاکٹرسید وسیم اختر نے کہاہے کہ رمضان بازاروں میں اشیاءخوردونوش کی قیمتیں آسمان سے باتیں کررہی ہیں18کروڑ عوام کی قوت خرید بری طرح متاثر ہوئی ہے سبزیاں اور پھل 50روپے فی کلوزیادہ مہنگے فروخت ہورہے ہیںسرکاری سٹالوں پر اشیاءجلد ختم ہوجاتی ہیں مطلوبہ مقدار میں فراہمی کو یقینی بنایا جائےناجائز منافع خوری اور ذخیرہ اندوزی کے خاتمے کے لئے37سال پرانا قانون مناسب عمل درآمد نہ ہونے کے باعث غیر موثر ہوکر رہ گیا ہے ڈاکٹر سید وسیم اختر نے مہنگائی کوکنٹرول کرنے کے حوالے سے نئے قوانین کی تشکیل کامطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ جب تک غریب عوام کوحقیقی معنوں میں ریلیف میسرنہیں آئے گا تب تک حکومتی کھوکھلے دعوﺅں پر کوئی اعتبار نہیںکرے گاپرائس کنٹرول ایکٹ1977کے سیکشن6کے تحت ناجائز منافع خوری اور ذخیرہ اندوزی پر3سال قیداور ایک لاکھ جرمانے کی سزا مقررہے مگر سرکاری اعدادوشمار سے یہ بات عیاں ہوتی ہے کہ بڑے بڑے مگرمچھ معمولی جرمانے دے کر چھوٹ جاتے ہیں اور پہلے سے زیادہ لوٹ مار کرتے ہیں گزشتہ ماہ لاہور میں150لوگوں کوایک لاکھ 65ہزار جرمانہ کیاگیا جبکہ ان میں سے کسی ایک کو بھی سزا نہیں دی گئی انہوں نے کہاکہ رہی سہی کسر اوگرانے گیس اورسی این جی کی قیمتوں میں اضافے کانوٹیفکیشن جاری کرکے پوری کردی ہے گیس اور سی این جی کی قیمتوں میںاضافہ عوام کے ساتھ ظلم کے مترادف ہے یوں محسوس ہوتا ہے کہ پاکستان میں مافیاکی حکومت قائم ہے   جب جس کا دل کرتا ہے قیمتیں بڑھادیتاہے۔عوام کی خون پسینے کی کمائی کو دونوں ہاتھوں سے لوٹا جارہاہے۔جماعت اسلامی کے رہنما ڈاکٹر سید وسیم اختر نے مزیدکہاکہ حکمرانوں کی اولین ذمہ داری ہے کہ غریب عوام کوسستی اشیاءفراہم کرے۔پرائس کنٹرول کمیٹیاں کاغذی کاروائیوں میں مصروف ہیں۔ایک طرف لوگ فاقہ کشی سے مجبور ہوکر خودکشیا ں کررہے ہیں تودوسری طرف امراءاور مراعات یافتہ طبقہ کو سبسڈی دی جارہی ہے جوکہ غریب عوام کے زخموں پر نمک پاشی کے مترادف ہے۔                        جاری کردہ

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -