ایسے بھڑجو شکار کی لاشوں سے اپنا چھتہ تعمیر کرتا ہے

ایسے بھڑجو شکار کی لاشوں سے اپنا چھتہ تعمیر کرتا ہے
 ایسے بھڑجو شکار کی لاشوں سے اپنا چھتہ تعمیر کرتا ہے

  

بیجنگ (نیوز ڈیسک) سائنسدانوں نے چین کے جنگلوں میں ایک ایسے بھڑکا سراغ لگایا ہے جو اپنے شکار کی لاشوں سے اپنا چھتہ تعمیر کرتا ہے۔ جنوبی چین کے جنگلوں میں پایا جانے والا یہ بھڑکیڑیوں کا شکار کرتا ہے اور پھر ان کی لاشوں کو کھانے کی بجائے اپنے چھتے کے بیرونی حصے میں جمع کرتا جاتا ہے۔ سائنسدانوں نے اس بھڑکو ”ڈٹرجینیا اوسیریم کا نام دیا ہے جس کا مطلب ہے“ ہڈیوں کے گھر والا بھڑ، ماہرین کا کہنا ہے کہ یہ بھڑ اپنےگ ھر کے بیرونی حصے میں کیڑیوں کی کھوپڑیوں کو جمع کردیتا ہے جس کی وجہ سے یہ ہوسکتی ہے کہ کوئی اور حشرات اس کے چھتے پر حملہ نہ کریں۔ اس بھڑ کا شکار بننے والی کیڑیا خطرناک ڈنگ مارتی ہیں اس لئے پھر ان کی کھوپڑیوں کو چھتے کے سامنے والے حصے میں سجاد ینا ہے جس سے حملہ آور اسے خطرناک کیڑیوں کی رہائش گاہ سمجھ کر اس سے دور رہتے ہیں۔

مزید :

صفحہ آخر -