2 روز قبل فیس بک اور انسٹاگرام ڈاﺅن ہوگئیں، آپ کی پسندیدہ سائٹس آج کل بار بار بند کیوں ہوجاتی ہیں؟ اصل وجہ جانئے

2 روز قبل فیس بک اور انسٹاگرام ڈاﺅن ہوگئیں، آپ کی پسندیدہ سائٹس آج کل بار بار ...
2 روز قبل فیس بک اور انسٹاگرام ڈاﺅن ہوگئیں، آپ کی پسندیدہ سائٹس آج کل بار بار بند کیوں ہوجاتی ہیں؟ اصل وجہ جانئے

  


نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) گزشتہ دنوں بھی فیس بک، انسٹاگرام اور واٹس ایپ گھنٹوں بند رہیں اور لوگوں کو مواد اپ لوڈ کرنے میں دشواری کا سامنا رہا۔ آخر ایسا کیوں ہوتا ہے کہ ہماری پسندیدہ ویب سائٹس بار بار بند کیوں ہو جاتی ہے؟ اب ٹائمز آف انڈیا نے اپنی ایک رپورٹ میں اس پیچیدہ سوال کا جواب دینے کی کوشش کی ہے۔ اخبار کے مطابق ویب سائٹس بند ہونے کی کئی وجوہات ہو سکتی ہیں۔ کنٹینٹ ڈلیوری نیٹ ورک (سی ڈی این)سسٹمز ہوں یا ویب ہوسٹنگ پروائیڈرز ہوں، حتیٰ کہ خود انٹرنیٹ بھی اس کی وجہ ہو سکتا ہے۔ تاہم سب سے بڑی وجہ سی ڈی این سسٹمز ہی ہوتے ہیں، جن میں سے ایک کلاﺅڈ فلیئر (Cloudflare)ہے۔

کلاﺅڈ فلیئر ایک امریکی کمپنی ہے جو ویب سائٹس کو اپنی سروسزڈی این ایس، ڈی ڈی او ایس پروٹیکشن، آن لائن سکیورٹی وغیرہ مہیا کرتی ہے۔ بنیادی طور پر کلاﺅڈفلیئر جیسی کمپنیاں صارف اور فیس بک جیسی ویب سائٹس کے ہوسٹنگ پروائیڈرز کے درمیان مڈل مین کا کردار ادا کرتی ہیں۔ اب کلاﺅڈ فلیئر کی اپنی رپورٹ کے مطابق 1کروڑ 20لاکھ ویب سائٹس اس کی کسٹمر ہیں اور روزانہ ان میں 20ہزار نئی ویب سائٹس کا اضافہ ہو رہا ہے۔ اب سوچیے کہ جب ایک کلاﺅڈ فلیئر ڈاﺅن ہو گی تو اس کی کسٹمر ویب سائٹس، جن کی تعداد کروڑوں میں ہے، وہ ساری کی ساری بھی ڈاﺅن ہو جائیں گی۔

گزشتہ دنوں جب فیس بک، واٹس ایپ اور انسٹاگرام بیک وقت بند ہوئیں، اس کے پیچھے یہی وجہ تھی۔ یہ کمپنیاں کلاﺅڈ فلیئر ہی کی کسٹمر ہے اور اس روز کلاﺅڈ فلیئر ڈاﺅن ہو گئی تھی جس کی وجہ سے یہ تمام ویب سائٹس بھی ڈاﺅن ہو گئیں۔ اس روز کلاﺅڈ فلیئر نے اپنی ’ویب ایپلی کیشن فائروال‘ کی اپ ڈیٹ دینے کی کوشش کی تھی جس میں مسئلہ آ گیا اور وہ ڈاﺅن ہو گئی۔ کلاﺅڈ فلیئر کے انجینئرز کو یہ جاننے میں 20منٹ لگے کہ مسئلہ کہاں ہے اور پھر اسے ٹھیک کرنے میں آدھا گھنٹہ لگا ۔ تب کلاﺅڈ فلیئر تو ٹھیک ہو گئی لیکن اس کی کسٹمر ویب سائٹس کو اپنے پیروں پر کھڑا ہونے میں 8گھنٹے کا وقت لگا۔ ویب سائٹس کے ڈاﺅن ہونے کی یہ ایک بڑی وجہ ہے تاہم یہ واحد وجہ نہیں ہے۔

مزید : بین الاقوامی /سائنس اور ٹیکنالوجی