ہاکی کے میدان میں پاکستان ناکام کیوں؟سابق سیکریٹری ہاکی فیڈریشن نےایسی بات کہہ دی کہ قومی کھیل کےزوال پذیر ہونے کی اصل وجہ سامنے آجائے گی

ہاکی کے میدان میں پاکستان ناکام کیوں؟سابق سیکریٹری ہاکی فیڈریشن نےایسی بات ...
ہاکی کے میدان میں پاکستان ناکام کیوں؟سابق سیکریٹری ہاکی فیڈریشن نےایسی بات کہہ دی کہ قومی کھیل کےزوال پذیر ہونے کی اصل وجہ سامنے آجائے گی

  

لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن) سابق سیکریٹری پاکستان ہاکی فیڈریشن کرنل(ر)مدثراصغرکاکہناہےکہ پیسوں کی وجہ سےہاکی فیڈریشن میں سیاست آگئی ہے،اگرلاکھوں روپےتنخواہیں ہی دینی ہیں توباہر سے لوگوں کو معاملات کی بہتری کےلیےلاناچاہیے، شہباز سینئر بہت اچھے کھلاڑی تھے لیکن وہ اچھے ایڈمنسٹریٹر ثابت نہیں ہوسکے۔

تفصیلات کے مطابق پاکستان ہاکی فیڈریشن کے سابق سیکریٹری کرنل (ر) مدثر اصغر کا کہنا ہے کہ پیسوں کی وجہ سے ہاکی فیڈریشن میں سیاست آگئی ہے، خالد سجاد کھوکھر اور آصف باجوہ سمیت دوسرے لوگ پاکستان ہاکی کو بہتر کرنے کی اہل نہیں، اس سے پہلے بھی جب آصف باجوہ ہاکی فیڈریشن میں آئے اس وقت بھی ان کا آنا غلط تھا،وہ کبھی کوچ اور کبھی سیکرٹری بن کر سامنے آٰے لیکن رزلٹ آپ کے سامنے ہے۔مدثر اصغر نے کہا کہ ان لوگوں کی موجودگی میں 20 سال سے قومی کھیل ہاکی کی بہتری کے لیے کوئی کام نہیں ہوا، آگے بھی ایسے لوگوں سے امید نہیں، ان سے پہلے شہباز سینئر بھی ناکام رہے، وہ بہت اچھے کھلاڑی تھے لیکن وہ اچھے ایڈمنسٹریٹر ثابت نہیں ہوسکے۔

مدثر اصغرکےمطابق ماضی میں فیڈریشن کا صدر یا سیکریٹری پیسے نہیں لیتے تھے، یہ عہدے اعزازی ہونا چاہیے، اگر لاکھوں روپے تنخواہیں ہی دینی ہیں تو وہ باہر سے لوگوں کو معاملات کی بہتری کے لیے لانا چاہیے، موجودہ صدر پی ایچ ایف بریگیڈئیر ریٹائرڈ خالد سجاد کھوکھر فنڈز اکٹھا نہیں کرسکتے، قومی کھیل کی ترقی ان کے بس کا کام نہیں، ہاکی کی اچھی ٹیم بنانے کے لیے کم از کم سالانہ ایک ارب چاہیے۔

مزید :

کھیل -