ڈی ایچ کیو ہسپتال مظفر گڑھ،مختلف وارڈز میں ادویات کا بحران

    ڈی ایچ کیو ہسپتال مظفر گڑھ،مختلف وارڈز میں ادویات کا بحران

  

 مظفرگڑھ(نامہ نگار)  ڈی ایچ کیو ہسپتال کے مظفر گڑھ مین سٹور میں ادویات تو موجود ہیں مگر لیبرروم اور ایمرجنسی میں کوئی ادویات فراہم نہیں کی جاتی، ایمرجنسی میں آنے والے ایکسیڈنٹ کے مریضوں کیلئے سرنج، ٹی ٹی انجیکشن، زخموں کو سٹیج کرنے کیلئے دھاگہ(بقیہ نمبر53صفحہ6پر)

 تک میسر نہیں، جبکہ ہسپتال  انتظامیہ نے لوکل پرچائز ادویات کے نام پر ماہانہ لاکھوں روپے کے بل پاس کرا لیئے ہیں، جبکہ ڈلیوری کیلئے آنے والی مریضوں سے باہر سے ادویات مانگوائی جاتی ہیں گزشتہ روز پرانے قریشی کے رہائشی عابد حسین اپنی بیوی کو ڈلیوری کیلئے دیہی مرکز بصیرہ لے آیا تو لیبر روم سٹاف نے ڈلیوری کی تمام ادویات باہر سے مانگوا لیں، ڈلیوری میں مریضہ کے ہاں دو جڑواں بچوں کی پیدائش ہوئی تو بلیڈنگ زیادہ ہونے سے مریضہ کی حالت تشویشناک ہو گئی۔عابد حسین نے احتجاج کیا تو نرس نے مریضہ کو اپنے سر سے اتارتے ہوئے ڈی ایچ کیو ہسپتال مظفرگڑھ رائفر کر دیا، اس موقع پر شکایت کیلئے سی او ہیلتھ سمیت دیگر آفیسران کو کال کی تو کال اٹینڈ نہ ہوئی، جبکہ عابد حسین کے احتجاج کی ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہونے پر سی ای او ہیلتھ مظفرگڑھ ڈاکٹر مہر محمد اقبال کی انچارج آر ایچ سی بصیرہ ڈاکٹر سکندر مرزا  کی سرزنش کی تو ڈاکٹر سکندر مرزا ہسپتال پہنچ گئے اور تمام سٹاف کو بلا کر رات گئے تک میٹنگ کرتے رہے۔ ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ آعلی آفیسران کے وزٹ کے موقع پر ہسپتال کے مین سٹور میں ادویات  موجود ہونیکا سٹاک تو دیکھا یا جاتا ہے مگر مریضوں کو سرنج تک میسر نہیں کی جاتی

مزید :

ملتان صفحہ آخر -