سکولوں کی سالانہ فیس والدین کے ساتھ ظلم  ہے،فراز الرحمن 

سکولوں کی سالانہ فیس والدین کے ساتھ ظلم  ہے،فراز الرحمن 

  

کراچی(اسٹاف رپورٹر) کاٹی کے سابق سینئر نائب صدر اور کے بی جی کے چیف ترجمان فراز الرحمٰن نے اسکول مالکان کی جانب سے والدین سے ڈبل فیس وصولی کی مذمت کرئے ہوئے کہا ہے کہ اسکولز کھلتے ہی نجی اسکول مالکان نے جولائی کی ماہانہ فیس کے ساتھ سالانہ فیس بھی لگا کر بھیج دی ہیں جو کہ والدین کے ساتھ ظلم و زیادتی ہے۔ کرونا کی وجہ سے لاک ڈاؤن جیسے حالات سے گزرنے والے والدین اچانک ڈبل فیس کیسے بھر سکیں گے۔انہوں نے حکومت اور اعلیٰ حکام سے اپیل کی کہ وہ اسکولز انتظامیہ کو سالانہ فیس نہ لینے کا پابند کریں۔ان کا کہا تھا کہ اس سے انکار نہیں کہ نجی اسکول انتظامیہ نے بھی کرونا وبا کے دوران سخت ترین حالات کا سامنا کیا ہے، میری حکومت سے درخواست ہے کہ وہ نجی اسکولز مالکان کیلئے بھی ریلیف پیکیج کا اعلان کرے اور انہیں بغیر سود قرض دے تاکہ وہ تدریسی سرگرمیاں بحال رکھ سکیں۔ انہوں نے کہا کہ ان تمام انڈسٹریز کے بارے میں سوچنا ضروری ہے جو سخت حالات سے گزرے،انہوں نے کہا کہ ان معصوم بچوں کا کیا قصور ہے جن کے والدین کرونا وبا کے دوران خراب معاشی حالات کی وجہ سے بیروزگار ہوگئے۔  اسکول انتظامیہ، حکومت سندھ اور فیڈرل حکومت پر ذمہ داری بنتی ہے کہ بچوں کے والدین کو فوری ریلیف دیا جائے، انہوں نے کہا کہ والدین سے دو ماہ کی فیس مانگنا انصاف کے خلاف ہے۔ انہوں نے آخر میں کہا کہ اس طرح کے چیلنجز کا مقابلہ کرنے کیلئے اگر ہم نے کوئی جامع پالیسی نہیں بنائی تو ہم اپنے نوجوانوں کو بہت پیچھے دھکیل دیں گے۔ 

مزید :

صفحہ آخر -