” میں نے بھی کچھ ٹیپس دیکھی ہیں جو عمران خان کی نہیں لیکن پی ٹی آئی رہنماﺅں کی ہیں “سینئر صحافی حامد میر نے دعویٰ کر دیا 

” میں نے بھی کچھ ٹیپس دیکھی ہیں جو عمران خان کی نہیں لیکن پی ٹی آئی رہنماﺅں ...
” میں نے بھی کچھ ٹیپس دیکھی ہیں جو عمران خان کی نہیں لیکن پی ٹی آئی رہنماﺅں کی ہیں “سینئر صحافی حامد میر نے دعویٰ کر دیا 

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن )سینئر صحافی و تجزیہ کار حامد میر کا کہنا ہے کہ میں نے بھی کچھ ٹیپس دیکھی ہیں جو عمران خان کی نہیں لیکن پی ٹی آئی کے کچھ صاحبان کی تھیں، جب میں نے وہ دیکھیں تو افسوس ہوا اور میرا خیال ہے کہ وہ ٹی وی سکرین پر نہیں چل سکتیں۔

نجی ٹی وی "جیونیوز "کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے حامد میر کا کہناتھا کہ تین چار سال پہلے جج ارشد ملک کی ایک ویڈیو ٹیپ آئی ان کے خلاف کارروائی ہوئی اور انہیں نوکری سے فارغ کیاگیا، اس پر سپریم کورٹ نے بھی ایکشن لیا اوراس کیس میں عدالت کا فیصلہ بھی موجود ہے۔سپریم کورٹ کے فیصلے میں کہا گیا کہ جو آڈیو یا ویڈیو ہے اس کو قابل قبول بنانے کے لیے کیا کیا شرائط ہونی چاہئیں، اس فیصلے میں 21 شرائط لکھی گئی ہیں، اس میں اہم ترین شرط ہے کہ آڈیو یا ویڈیو ٹیپ جس نے ریکارڈ کی اسے عدالت میں بتانا ہوگا کہ یہ میں نے ٹیپ کی اور کیوں کی ہے، عدالتی فیصلے کے مطابق کسی بھی ٹیپ کو قابل قبول بنانے کے لیے اس کا فارنزک بھی ضروری ہے، اس کی ٹرانسکرپشن کو عدالت میں پیش کرکے میچ کیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ ٹیپس کے معاملے پر پی ٹی آئی کی لیڈر شپ کے موقف میں کافی تضاد ہے، شہباز گل ٹیپ کو جعلی قرار دے رہے ہیں جب کہ شیریں مزاری کہہ رہی ہیں کہ یہ ٹیپ سکیور لائن سے ریکارڈ کی گئی ہے مگر شیریں مزاری کا مطالبہ جائز ہے کہ بتایا جائے یہ کس نے ٹیپ کی ہے۔حامد میر کا کہنا تھا کہ اس کے علاوہ بھی ویڈیو ٹیپس کے بارے میں سن رہے ہیں، میرا خیال ہے وہ سامنے نہیں آئیں گی کیونکہ وہ سامنے لائی بھی جائیں تو آپ ان کو ٹی وی سکرین پر پلے نہیں کرسکتے، جیسے جج ارشد ملک کی ویڈیو ٹیپ کے خلاف کارروائی ہوگئی لیکن وہ ٹی وی پر دکھانے قابل نہیں تھی۔

انہوں نے مزید کہا کہ اس طرح کی کچھ ٹیپس آسکتی ہیں لیکن ان کی بنیاد پر کارروائی کا آگے بڑھنا کافی مشکل ہوگا۔

مزید :

قومی -