مستونگ میں آپریشن کالعدم تنظیم کے 9اہم کمانڈرز سمیت 13دہشتگرد ہلاک ، 1گرفتار ، 10سکیورٹی افسر واہلکار زخمی

مستونگ میں آپریشن کالعدم تنظیم کے 9اہم کمانڈرز سمیت 13دہشتگرد ہلاک ، 1گرفتار ...

کوئٹہ (مانیٹرنگ ڈیسک ، نیوز ایجنسیاں ) بلوچستان کے علاقے مستونگ میں سکیورٹی فورسز کے سرچ آپریشن کے نتیجے میں کا لعدم تنظیم کے 9اہم کما نڈروں سمیت 13 دہشت گرد ہلاک ہوگئے ،ایک گرفتارکرلیاگیا جبکہ 10سے زائد فورسز افسراور اہلکار بھی زخمی ہوئے۔سکیورٹی ذر ا ئع کے مطابق مستونگ سے 50 کلو میٹر کے فاصلے پر واقع پہاڑی علاقے کوہ ما ران میں 24مئی کو کوئٹہ سے اغواء ہونیوالے چینی جوڑ ے کی مبینہ موجودگی کی اطلاع پر بازیابی کیلئے سکیورٹی فورسز نے بڑے پیمانے پر آپریشن شروع کیا تو وہاں موجود دہشت گردوں نے فورسز پر فائر نگ شروع کردی، فورسز کی جوابی کاروائی میں کالعدم تنظیم کے 9اہم کمانڈروں سمیت 13سے زائددہشت گردوں کی ہلا کت کی اطلاع مو صول ہوئی ہے ،یہ علاقہ کا لعدم تنظیم کا ہیڈ کوارٹر بتا یا جاتا ہے جہاں سے وہ ملک بھر میں اپنا نیٹ ورک چلا رہے تھے جبکہ انتہائی تربیت یافتہ دہشت گردوں کی جانب سے فورسز پر چھوٹے بڑے ہتھیاروں سے حملہ کیا گیا جس میں 10سے زائد افسران و اہلکار معمولی زخمی بھی ہوئے ،زخمی اہلکاروں کو سی ایم ایچ کوئٹہ منتقل کردیا گیا ،جبکہ ایک دہشت گرد نے اپنے آپ کو فورسز کے حوالے بھی کردیا ہے ۔ترجمان حکومت بلو چستا ن انوار الحق کاکڑ نے آپریشن کی تصدیق کی ہے تاہم انہوں نے تفصیلا ت سے متعلق آگاہ نہیں کیا ۔پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ آئی ایس پی آرکے مطابق جمعہ اورہفتہ کے روزسکیورٹی فورسزنے بلوچستان کے علاقے سلنچی اورمستونگ میں کارروائی کی ،دہشتگردوں نے ایک غارمیں پناہ لے رکھی تھی ،دہشت گردبلوچستان میں بڑی کارروائی کی منصوبہ بندی کررہے تھے ، خفیہ اطلاعات کے مطابق دو مغوی چینی اسی گروپ کی تحویل میں ہیں۔ ایک سینئر سکیورٹی اہلکارکا نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر نیوز ایجنسی اے ایف پی سے گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا آپریشن کے نتیجہ میں علاقے کو کلیئر کروا لیا گیا ہے،تاہم انہیں مغوی چینی جوڑا بازیاب کروانے میں کامیابی نہیں ملی البتہ جس گاڑی کو اغواء کی واردات میں استعمال کیا گیا تھا، وہ برآمدکر لی گئی ہے۔دہشتگردوں کے خفیہ ٹھکانے سے سکیورٹی فورسز نے چھ خودکش جیکٹیں، گولہ بارود، دھماکا خیز مواد، ڈیٹونیٹر، شمسی پینل اور راشن بھی اپنی تحویل میں لے لیا ہے۔دیگر ذرائع کے مطابق یہ آپریشن ایک روز قبل شروع کیا گیا تھا، میڈیا کو جو معلومات فراہم کی گئیں ان کے مطابق اس علاقے میں ایک غار میں شدت پسند تنظیم دولت اسلامیہ کے دس کے قریب اعلیٰ تربیت یافتہ افراد کو گھیرے میں لیا گیا۔ان ذرائع کے مطابق گھیرے میں لیے جانیوالے شدت پسندوں میں نہ صرف دولت اسلامیہ سندھ کا کمانڈر شامل ہے بلکہ یہ دولت اسلامیہ کا ایک اہم مرکز بھی ہے جس سے بلوچستان اورسندھ کے علاوہ بلوچستان سے متصل پنجاب کے سرحدی علاقوں میں دولت اسلامیہ کی کارروائیوں کو بھی کنٹرول کیا جاتا تھا۔

دہشتگرد ہلاک

مزید : صفحہ اول