پی پی پی چھوڑنے پر فردوس عاشق اعوان پر تنقید

پی پی پی چھوڑنے پر فردوس عاشق اعوان پر تنقید
پی پی پی چھوڑنے پر فردوس عاشق اعوان پر تنقید

  


دبئی (طاہرمنیر طاہر) پاکستان پیپلزپارٹی کی سابقہ رہنما اور پی پی پی کے دور حکومت میں مختلف اہم وفاقی عہدوں پر فائض رہنے والی فردوس عاشق اعوان نے پیپلزپارٹی کو چھوڑ کر اپنے حلقہ کے ووٹرز کے جذبات کو شدید مجروح کیا ہے۔ فردوس عاشق اعوان جب سے سیاست میں آئی ہیں وہ وقت کی ضرورت کے تحت پارٹیاں بدلتی رہی ہیں۔ جتنا عرصہ وہ پیپلزپارٹی میں رہیں ان کے حلقہ کے لوگوں نے انہیں محض پیپلزپارٹی کی وجہ سے کامیاب کرایا۔ پیپلزپارٹی، پارٹی کے ووٹرز اور جیالوں نے فردوس عاشق اعوان کو بے حد عزت دی لیکن ایک بار پھر فردوس عاشق اعوان نے اپنی محسن جماعت کو چھوڑ دیا جس سے پی پی پی کے کارکن شدید مایوس ہوئے ہیں۔ پارٹیوں اورکارکنوں پر اچھا برا وقت آتا ہی رہتا ہے لیکن یوں اچانک راتوں رات بغیر پارٹی ورکرز کو اعتماد میں لئے پارٹی بدل جانا اچھی بات نہیں بلکہ یہ ابن الوقت لوگوں کی نشانی ہے ۔ ساری عمر پیپلزپارٹی کا راگ الاپنے والی فردوس عاشق اعوان کا پاکستان تحریک انصاف میں جانا لوگوں کو اچھا نہیں لگا بلکہ عوام الناس نے فردوس عاشق اعوان کے پارٹی بدلنے کے فیصلہ پر شدید اور کڑی تنقید کی ہے۔ ان خیالات کا اظہار پی پی پی کے سینئر رہنما اور فردوس عاشق اعوان کے دیرینہ ساتھی چودھری محمد شکیل نے گزشتہ دنوں دبئی میں کیا۔ چودھری شکیل کا کہنا ہے کہ وہ اپنے حلقہ کے پارٹی کارکنوں کے ساتھ ہیں اور آنے والے انتخابات میں حلقہ 124 سے بطور ایم پی اے انتخابات میں حصہ لینے کا اعلان کرتے ہیں۔ چودھری محمد شکیل نے کہا کہ ان کے حلقہ انتخاب میں پیپلزپارٹی کے ووٹرز کی بھاری تعدادموجود ہے۔ جن کو ایک پلیٹ فارم پر متحد رکھنا بے حد ضروری ہے، لہٰذا اسی مقصدکیلئے انہوں نے اپنے حلقہ سے انتخاب لڑنے کا فیصلہ کیا ہے اورپی پی پی کی اعلیٰ قیادت پر اعتماد کا اظہار کیا ہے ۔

مزید : عرب دنیا