مسلمانوں پر حملے،سری لنکا میں مسلم وزرا اور ارکان اسمبلی مستعفی 

مسلمانوں پر حملے،سری لنکا میں مسلم وزرا اور ارکان اسمبلی مستعفی 

  

کولمبو(آئی این پی)سری لنکا کے مسلمان وزرا سمیت 9 مسلم اراکین پارلیمنٹ نے ایسٹر دھماکوں کے بعد ملک بھر میں اپنی برادری کے خلاف بڑھتے ہوئے نفرت انگیز حملوں پر اپنے عہدوں سے استعفی دے دیا۔بین الاقوامی خبر رساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق صدر میتھری پالا سریسینا کے حامی رکن اسمبلی کی جانب سے سرفہرست تین مسلمان سیاست دانوں کو معطل کرنے کا مطالبہ کیا گیا تھا جس کے بعد 9 اراکین اسمبلی نے استعفی دے دیا ہے جن میں کئی وزرا ہیں۔رپورٹ کے مطابق مقامی مذہبی لحاظ سے مرکزی شہر کینڈی میں ہزاروں افراد نے مظاہرہ کیا تھا اور مذہبی رہنما اتھرالیے رتنا نے دو صوبوں کے گورنروں اور کابینہ کے ایک رکن کو معطل کرنے کا مطالبہ کیا تھا۔ان کا کہنا تھا کہ مذکورہ افراد کا تعلق مبینہ طور پر ایسٹر بم حملوں کے ذمہ داروں سے تھا۔سری لنکا کے صدر سے جاری بیان میں کہا گیا کہ کولمبو کے مشرقی علاقے میں دکانیں اور دفاتر بھی بند رکھے گئے تھے اور دو صوبوں کے گورنروں نے بھی استعفی دے دیا۔بعدازاں چند گھنٹوں میں مرکزی جماعتوں سے تعلق رکھنے والے 9 مسلمان اراکین پارلیمان نے استعفی دے دیا اور ان کا کہنا تھا کہ وہ ایسٹر حملوں کی آزادانہ تفتیش کو یقینی بنانے کے لیے اپنے عہدے چھوڑ رہے ہیں۔مستعفی 9 اراکین میں وزیر تجارت رشاد بدیع الدین بھی شامل ہیں جن کی معطلی کو مذہبی پیشوا نے مطالبہ کیا تھا۔مسلمان رہنماوں کا کہنا تھا کہ جب سے ایسٹر دھماکوں کی ذمہ داری مسلم انتہاپسندوں پر عائد کی گئی ہے اس وقت سے ان کی برادری تشدد، نفرت انگیز تقاریر اور تعصب کا نشانہ بنی ہے۔وزیر پانی رووف حکیم کا کہنا تھا کہ مسلمانوں نے مشتبہ افراد کی گرفتاری کے لیے سیکیورٹی فورسز کے ساتھ تعاون کیا لیکن برادری کو مشترکہ طور پر نشانہ بنایا جارہا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ ہم نفرت انگیز تقاریر اور نفرت پھیلانے والوں کو تحفظ دینے کے رویے کا خاتمہ چاہتے ہیں۔وزیر نے استعفی دینے کے بعد صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ مسلمان اپنے عہدوں کو اس امید پر چھوڑ رہے ہیں کہ حکام ان کی برادری کے ارکان پر لگائے گئے الزامات کی مکمل تفتیش ایک مہینے میں کرا دیں گے۔مستعفی وزرا نے مشترکہ بیان میں کہا کہ استعفی دینے والے تمام وزرا وزیراعظم رانیل وکرامے سنگھے کی حکومت کی حمایت بدستور جاری رکھیں گے۔

مزید :

عالمی منظر -