اولڈ ایج ہومزمیں مقیم شہریوں کے پاس صرف یادیں،عید پر کوئی ملنے نہ آیا 

  اولڈ ایج ہومزمیں مقیم شہریوں کے پاس صرف یادیں،عید پر کوئی ملنے نہ آیا 

  

 لاہور (آ ئی این پی)شہر کے مختلف اولڈ ایج ہومز میں مقیم بزرگ شہریوں کی آنکھیں عیدپراپنوں کی راہ دیکھ رہی ہیں، قسمت اورحالات کا شکاران بزرگ شہریوں میں سے کچھ ایسے ہیں جن کی دیکھ بھال کرنیوالا کوئی نہیں ہے جبکہ کئی ایسے بھی ہیں جن کی اولاد خود انہیں یہاں چھوڑگئی ہے۔تفصیلات کے مطا بق لاہور کی پاک عرب سوسائٹی میں بنائے گئے ہیون ہومز میں اس وقت 14 بزرگ شہری مقیم ہیں ، ان میں 55 سالہ خاتون رشیدہ خانم بھی شامل ہیں، انہوں نے بتایا کہ ان کے تین بچے ہیں اور تینوں شادی شدہ ہیں۔ وہ اپنے بیٹے کے ساتھ رہتی تھیں لیکن بیٹا کاروبار میں نقصان کی وجہ سے بہت زیادہ مقروض ہوگیا اوراس نے مجھے میری بڑی بیٹی کے گھر چھوڑ دیا اور پھر بیٹی مجھے یہاں چھوڑگئی۔ انہوں نے آبدیدہ آوازمیں بتایا کہ بیٹا تو پھر بھی کبھی کبھار ملنے آجاتا ہے لیکن بیٹیاں جن سے وہ سب سے زیادہ پیارکرتی تھیں وہ آج تک ملنے نہیں آئیں۔ عید پر کوئی ملنے آگیا تو ٹھیک ورنہ صبر شکر کرکے جس طرح باقی دن گزرگئے عید کا دن بھی گزارلیں گے۔ایک اور خاتون کا کہنا تھا ان کے 4 بچے ہیں، تینوں بیٹیاں شادی کے بعد بیرون ملک مقیم ہیں۔ ایک بیٹی کے ساتھ وہ ساتھ افریقا میں تھیں، بیٹی نے وہاں سے واپسی کا ٹکٹ کروا کر پاکستان بھیج دیا اورمیں پھر یہاں آگئی۔ وہ اپنے بچوں کے نام نہیں بتانا چاہتیں، وہ عزت دارلوگ ہیں اور بڑی سوسائٹی میں رہتے ہیں۔ اس طرح ان کی بدنامی ہوگی اور کوئی ماں اپنے بچوں کی بدنامی کیسے کرسکتی ہے۔ بس اللہ سے دعاکرتی ہوں کہ میری اولاد کو ہدایت نصیب فرمائے۔ایک بزرگ محمد دین نے کہا اس نے زندگی کے 25 سال بیرون ملک گزارے جو کچھ کمایا اولاد کے لئے بھیجتا رہا، ان کواچھی تعلیم دلائی، شادیاں کیں اورجب واپس آیا تو اولاد نے منہ موڑ لیا۔ 

مزید :

علاقائی -