گاڑیوں کے فٹنس سرٹیفکیٹ کے حوالے سے قرارداد اسمبلی میں جمع

گاڑیوں کے فٹنس سرٹیفکیٹ کے حوالے سے قرارداد اسمبلی میں جمع

  

لاہور (سٹی رپورٹر) مسلم لیگ (ن) کی رکن پنجاب اسمبلی سعدیہ تیمور نے ایک تحریک التوائے کار پنجاب اسمبلی میں جمع کروا دی ہے جس کے مطابق پنجاب بھر میں کمرشل گاڑیوں کو فٹنس سرٹیفکیٹ جاری کرنے والی غیرملکی کمپنی کی جانب سے فٹنس سینٹرز تا حال بند ہونے پر محکمہ ٹرانسپورٹ کی جانب سے فٹنس اختیارات واپس موٹر وہیکل ایگزامینرز کو دینے پر غور شروع کر دیا گیا ہے،فٹنس سینٹرز بند رہنے سے گاڑیوں کی بڑی تعداد بغیر فٹنس وروٹ پرمٹ شاہراہوں پر موجود ہیں جو کسی بھی وقت بڑے حادثے کا سبب بن سکتی ہے۔

جبکہ محکمہ فٹنس سرٹیفکیٹ کے بغیر روٹ پرمٹ بھی جاری نہیں کر سکتا۔ کورونا لاک ڈاؤن کے باعث پبلک ٹرانسپورٹ بند ہونے پر غیر ملکی کمپنی اوپس نے بھی اپنے پنجاب بھر میں تمام وہیکل انسپکشن سرٹیفکیٹ سینٹرز بند کر دیئے تھے اور اپنے تمام سٹاف کو بھی فارغ کر دیا تھا جبکہ اب تمام پبلک ٹرانسپورٹ بحال ہونے کے باوجود بھی غیر ملکی کمپنی کی جانب سے فٹنس سینٹرز بحال نہیں کئے جبکہ غیر ملکی کمپنی کو پراونشل ٹرانسپورٹ اتھارٹی کی جانب سے باقاعدہ تحریری مراسلہ بھی جاری کیا جا چکا ہے کہ وہ فوری طور پر اپنے فٹنس سینٹرز کو آپریشنل کریں لیکن اسکے باوجود تا حال فٹنس سرٹیفکیٹ سسٹم بند ہیں، جب تک فٹنس سرٹیفکیٹ کمرشل گاڑیوں کے پاس نہیں ہوگا انہیں روٹ پرمٹ بھی جاری نہیں کیا جا سکتا ہے اور روٹ پرمٹ جاری نہ ہونے کے باعث نہ صرف گورنمنٹ کو مالی نقصان برداشت کرنا پڑ رہاہے۔ #/s#

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -