جرمن چانسلر کا امیگریشن اصلاحات پر غور کا اعلان

جرمن چانسلر کا امیگریشن اصلاحات پر غور کا اعلان

 بر لن (آن لائن)جرمن چانسلر انجیلا مر کل نے کہا ہے کہ وہ ایک اتحادی جماعت کی طرف سے تارکین وطن سے متعلق قوانین میں بڑی اصلاحات کے منصوبے کا جائزہ لیں گی۔ تاہم انہوں نے اس معاملے پر اپنی حکومت میں کسی اختلاف کی خبروں کو رد کیا ہے۔مرکل کی مخلوط حکومت میں شامل جماعت سوشل ڈیموکریٹک پارٹی (SPD) کی طرف سے مطالبہ کیا گیا ہے کہ یورپ کی سب سے بڑی معیشت جرمنی میں آنے کے خواہش مند تارکین وطن کے لیے پوائنٹ سسٹم متعارف کرایا جائے۔ اس حوالے سے بات کرتے ہوئے میرکل کا کہنا تھا، ’’پہلے مجھے خود اس پر اپنی رائے قائم کرنا ہو گی پھر دیکھتے ہیں کہ ہم امیگریشن کے حوالے سے کیا کر سکتے ہیں۔‘‘جرمن چانسلر کا کہنا تھا کہ اس وقت حکمران جماعتوں کے مابین مخلوط وفاقی حکومت کے قیام کے لیے جو معاہدہ طے پایا تھا، امیگریشن سے متعلق ممکنہ اصلاحات اس کا حصہ نہیں تھیں، لہٰذا اس کا مطلب یہ ہے کہ حکومتی جماعتوں میں اس بارے میں کوئی اختلاف ہے ہی نہیں۔SPD کے رہنما تھوماس اوپرمان کے مطابق جرمنی کو ہر سال تین سے چار لاکھ تک تربیت یافتہ تارکین وطن کی ضرورت ہے،جرمن خبر رساں ادارے ڈی پی اے کے مطابق یہ تسلیم کرتے ہوئے کہ جرمنی میں بڑی تعداد میں آنے والے غیر ملکی پناہ گزینوں کی وجہ سے مسائل موجود ہیں، خاص طور پر علاقائی حکومتوں کے لیے، انگیلا میرکل نے کہا کہ یہ معاملہ برلن حکومت کے ایجنڈے پر موجود ہے۔جرمن پارلیمان کے ایوان زیریں میں SPD کے رہنما تھوماس اوپرمان نے امیگریشن کے حوالے سے نئے مجوزہ قوانین کا ایک مسودہ تیار کیا تھا۔ اس میں دراصل کینیڈا کی طرز پر پوائنٹ سسٹم متعارف کرانے کی بات کی گئی ہے تاکہ لاکھوں تربیت یافتہ ورکرز کو جرمنی آنے کی ترغیب دی جا سکے۔ اوپرمان کے مطابق جرمنی کو ہر سال تین سے چار لاکھ تک تربیت یافتہ تارکین وطن کی ضرورت ہے۔

مزید : عالمی منظر