غلط انجکشن لگانے سے ہلاکت پر عدالت کے باہر ڈاکٹرز کیخلاف حتجاج

غلط انجکشن لگانے سے ہلاکت پر عدالت کے باہر ڈاکٹرز کیخلاف حتجاج

لاہور(نامہ نگار)غلط انجکشن لگنے سے جوہرٹاون کے رہائشی شرجیل احمد کی ہلاکت کیخلاف اس کے رشتہ داروں نے کتبے اٹھاکر نجی ہسپتال کے ڈاکٹرز کی ضمانتیں خارج کرانے کیلئے سیشن کورٹ کے باہر خاموش احتجاج کیا ایڈیشنل سیشن جج منیر احمد نے تھانہ جوہرٹاون پولیس سے 11مارچ کو مقدمہ کاریکارڈ طلب کر لیا ہے جوہر ٹاؤن میں واقع نجی ہسپتال کے ڈاکٹر ظفراقبال اور ڈاکٹر اقصیٰ کیخلاف مبینہ طور پر شرجیل کو غلط انجکشن لگاکر شرجیل احمد نامی شخص کی ہلاکت پر پولیس نے مقدمہ درج کررکھا ہے مذکورہ ملزمان نے گزشتہ روز عدالت میں درخواست ضمانت دائر کی ،دونوں ڈاکٹرز کی ضمانتیں دائر ہونے کی اطلاع مقتول کے ورثا کو ہوئی جو ہاتھوں میں پلے کارڈ اٹھائے سیشن سیشن عدالت پہنچ گئے عدالت میں متاثرہ خاندان نے اپنے وکیل کی جانب سے مؤقف اختیار کیا کہ دونوں ڈاکٹرز نے ٹیٹنس کا غلط انجکشن لگا کر مبینہ طور پر شرجیل کو ہلاک کرکے اس کے بچوں کو یتیم کردیا لیکن تھانہ جوہر ٹاؤن پولیس ملزمان کو گرفتار نہیں کررہی ہے ،عدالت سے استدعا کی کہ ملزمان کی ضمانتیں خارج کی جائیں جس پر عدالت نے آئندہ سماعت پر متعلقہ پولیس نے مقدمہ کاریکارڈ طلب کرلیا ہے۔

مزید : میٹروپولیٹن 4