دبئی میں ’تھری اِن ون‘ پاکستانی رنگے ہاتھوں پکڑا گیا

دبئی میں ’تھری اِن ون‘ پاکستانی رنگے ہاتھوں پکڑا گیا
دبئی میں ’تھری اِن ون‘ پاکستانی رنگے ہاتھوں پکڑا گیا

  

دبئی سٹی (مانیٹرنگ ڈیسک) بیرون ملک کام کرنے والے پاکستانیوں کی اکثریت اپنی محنت اور دیانتداری کی وجہ سے پہچانی جاتی ہے مگر بعض غیر ذمہ دار افراد اپنی شرمناک حرکات کی وجہ سے ملک و قوم کے لئے شرمندگی کا باعث بھی بن جاتے ہیں۔

متحدہ عرب امارات میں ایک ایسے ہی پاکستانی شخص کو گرفتار کیا گیا ہے جو غیر معمولی بددیانتی اور جعل سازی کے لئے تین مختلف ناموں کے ساتھ فنگر پرنٹ رجسٹریشن کرواچکا تھا اور ایک شخص ہوتے ہوئے بھی تین مختلف شناختوں کا مالک تھا۔ گزشتہ سال ستمبر میں الرفعہ پولیس سٹیشن میں ایک شخص کی طرف سے مشکوک چیک کے متعلق شکایت کی گئی تھی۔ لیفٹیننٹ محمد مراد کا کہنا ہے کہ جب مشکوک چیک سے متعلق تحقیقات کی گئیں تو ایک شخص کے متعلق انکشاف ہوا کہ وہ ایک سے زائد شناخت استعمال کرتے ہوئے جعلسازی کا مرتکب ہورہا ہے۔ جب اس شخص کو حراست میں لے کر معلومات لی گئیں تو پتہ چلا کہ اس کے فنگر پرنٹ تین مختلف ناموں کے ساتھ میچ ہورہے ہیں۔

مزید پڑھیں: فیس بک میں نوکری حاصل کرنے کا دارومدار صرف ایک سوال پر، بانی نے کردیا حیرت انگیز انکشاف

 مزید تفتیش سے معلوم ہوا کہ اس کا اصل نام محمد مدثر ہے جبکہ بعد میں اس نے دو مزید ناموں کے ساتھ فنگر پرنٹ رجسٹرڈ کروائے۔ یہ شخص جب پاکستان آیا تو اس نے اپنا نام بدل کر نیا پاسپورٹ بنوالیا اور دوبارہ متحدہ عرب امارات میں محمد طاہر کے نام سے داخل ہوا اور اسی طرح اس نے تیسری جعلی شناخت بھی حاصل کی۔ ملزم کو باقاعدہ طور پر گرفتار کرلیا گیا ہے اور اب اس کے خلاف عدالتی کارروائی جاری ہے۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -