یورپ کے بڑے ملک کے قبرستان سے ایسی چیزیں نکل آئیں کہ جان کر آپ بھی کانپ جائیں گے

یورپ کے بڑے ملک کے قبرستان سے ایسی چیزیں نکل آئیں کہ جان کر آپ بھی کانپ جائیں ...
یورپ کے بڑے ملک کے قبرستان سے ایسی چیزیں نکل آئیں کہ جان کر آپ بھی کانپ جائیں گے

ڈبلن(مانیٹرنگ ڈیسک) آئرلینڈ میں ماہرین آثار قدیمہ کو ایک جگہ انسانی ہڈیاں ملنے کی اطلاع ملی۔ جب انہوں نے ہڈیوں پر تحقیق کی اور وہاں مزید کھدائی کی گئی تو ایسا چشم کشا انکشاف ہوا کہ دنیا دنگ رہ گئی۔ سی بی سی کی رپورٹ کے مطابق آئرلینڈ کے علاقے گیلوے کے قصبے توام (Tuam)کے قریب کھیلتے لڑکوں نے یہ ہڈیاں دیکھ کر ماہرین کو اطلاع دی، جن کے ڈی این اے ٹیسٹ کرنے سے معلوم ہوا کہ یہ کم عمر بچوں اور خواتین کی ہڈیاں ہیں۔ جب وہاں مزید کھدائی کی گئی تو سینکڑوں بچوں اور خواتین کی اجتماعی قبریں دریافت ہو گئیں۔ یہ قبریں دراصل سیوریج کے پائپ تھے جہاں مرنے کے بعد ان کی لاشیں پھینک دی جاتی تھیں۔

دنیا کا وہ اسلامی ملک جہاں لڑکیوں کا ریپ کرنے والوں کو اب سزا کی بجائے ’انعام‘ دیا جائے گا، ایسا قانون متعارف کروادیا گیا کہ دنیا میں ہنگامہ برپاہوگیا

رپورٹ کے مطابق بیسویں صدی عیسوی میں یہاں یتیم بچوں اور دنیا کی ٹھکرائی عورتوں کے لیے ایک شیلٹر ہاﺅس قائم تھا جو 1961ءمیں بند کر دیا گیا۔ یہاں رہنے والے سینکڑوںبچوں اور خواتین کی اموات کے متعلق تو لوگ جانتے تھے لیکن کسی کو یہ معلوم نہیں تھا کہ انہیں کہاں دفن کیا گیا ہے۔ اس کی سرکاری سطح پر ہونے والی تحقیق میں معلوم ہوا کہ ان لوگوں کی 1950ءکی دہائی میں اموات ہوئی تھیں اور منتظمین انہیں مرنے کے بعد کو زیرزمین سیوریج کے پائپوں میں پھینک دیتے تھے۔ سیوریج کے یہ پائپ 1937ءبند پڑے تھے۔ یہاں مرنے والے بچوں کی تعداد 800سے زائد تھی جن کی عمریں چند ہفتے سے 3سال کے درمیان تھیں۔

آئرش کمشنر برائے امور بچگان کیتھرین زیپونے کا کہنا تھا کہ ”بچوں کی باقیات کا اس طرح گندے پانی سے دریافت ہونا افسوسناک واقعہ ہے۔ ہم ان بچوں کے رشتہ داروں سے مشاورت کریں گے، جس کے بعد انہیں عزت کے ساتھ دفن کیا جائے گا اور ان کی یادگار بنائی جائے گی۔ ہم ان کی باقیات کے ساتھ اس طرح کا سلوک ہونے سے روکنے کے لیے ہر ممکن اقدامات اٹھائیں گے۔“مو¿رخ کیتھرین کارلیس کا کہنا تھا کہ ”مرنے والے یتیم بچوں اور بے سہارا خواتین کی جس طرح توہین کی گئی اس پر ذمہ داروں کو معافی مانگنی چاہیے۔“

مزید : ڈیلی بائیٹس

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...