اوبامہ نے صدارتی مہم کے دوران میری جاسوسی کرائی: ٹرمپ کا الزام

اوبامہ نے صدارتی مہم کے دوران میری جاسوسی کرائی: ٹرمپ کا الزام

واشنگٹن (اظہر زمان، بیورو چیف) امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے خود اپنی ٹیم اور پارٹی ارکان کو اس تازہ بیان سے حیران کردیا ہے کہ اوباما نے صدارتی انتخابی مہم کے دوران ان کی جاسوسی کی تھی۔ اس پر میڈیا کا تبصرہ بھی سامنے آگیا ہے جس کا کہنا ہے کہ پہلے وہ ایک ’’سازشی تھیوری‘‘ والے صدارتی امیدوار تھے اور اب وہ ایک ’’سازشی تھیوری‘‘ والے صدر بن چکے ہیں۔ صدر ٹرمپ نے جو الٹے سیدھے ٹویٹر پیغام جاری کرنے کی شہرت رکھتے ہیں آج صبح بھی اس نوعیت کے متعدد پیغام ٹویٹ کئے ہیں جن کا خلاصہ یہ ہے کہ اوبامہ انتظامیہ نے ٹرمپ کی صدارتی مہم کے دوران اس کی جاسوسی کی۔ ٹرمپ ٹاور میں انتخابی دفتر کے ٹیلیفون ٹیپ کئے اور وہاں کوئی غلط کارروائی نہ ملنے کے باوجود مانیٹرنگ کا سلسلہ جاری رکھا۔ بعد میں اس معلومات کو حکومت کے دیگر شعبوں کے ساتھ شیئر کرنے کیلئے نیشنل سکیورٹی ایجنسی کے قواعد و ضوابط کو نرم کیا۔ مقصد یہ تھا کہ یہ معلومات جس میں پرائیویٹ شہریوں کی بات چیت بھی شامل تھی میڈیا کو لیک کی جائے۔ صدر ٹرمپ نے اپنے ان الزامات کا کوئی ثبوت فراہم نہیں کیا لیکن یہ ضرور کہا کہ میں شرط لگا سکتا ہوں کہ صدر اوبامہ نے اکتوبر میں اور انتخابات سے پہلے میرے جو فون ٹیپ کرائے اس کی بنا پر ایک اچھا وکیل ایک بہت بڑا مقدمہ تیار کرسکتا ہے۔ صدر ٹرمپ کے پیغامات کے فوراً بعد میڈیا نے اس پر تبصرے شروع کردیئے۔ ’’واشنگٹن پوسٹ‘‘ کی مبصر کرس کلزا نے اپنے تبصرے میں کہا ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ پہلے ’’سازشی تھیوری‘‘ والے صدارتی امیدوار تھے اور اب وہ ’’سازشی تھیوری‘‘ والے صدر بن چکے ہیں۔ ٹرمپ نے صدارتی انتخابات سے قبل یہ سازشی تھیوری پیش کرکے شہرت حاصل کی تھی کہ اوبامہ امریکہ میں پیدا نہیں ہوا تھا۔ اگرچہ بعد میں انہوں نے اپنا یہ الزام واپس لے کر معافی مانگ لی تھی۔ اب صدر ٹرمپ نے سابق انتظامیہ پر جو الزام لگایا ہے اس کی نوعیت سابق صدر رچرڈ نکسن کے واٹر گیٹ سکینڈل جیسی ہے تاہم دیکھنا یہ ہے کہ سیاسی حلقے اور میڈیا ٹرمپ کے تازہ الزام کو کتنی سنجیدگی سے لیتے ہیں۔ سابق صدر بارک اوباما کے ایک ترجمان کیون لیوس نے صدر ٹرمپ کے اس الزام کی سختی سے تردید کی ہے کہ اوبامہ انتظامیہ نے صدارتی مہم کے دوران ٹرمپ کے انتخابی دفاتر کے ٹیلیفون خفیہ طور پر ٹیپ کئے تھے۔ ترجمان نے ’’فوکس نیوز‘‘ پر ایک انٹرویو میں بتایا کہ ٹرمپ نے اپنے الزامات کے حق میں کوئی ثبوت پیش نہیں کیا۔انہوں نے واضح کیا کہ اوباما انتظامیہ کا یہ طے شدہ اصول تھا کہ محکمۂ انصاف کی خود مختار تحقیقات میں وائٹ ہاؤس کے حکام مداخلت نہیں کریں گے۔ ان کا کہنا تھا کہ سابق انتظامیہ صدارتی مہم میں پوری غیر جانبدار رہی اور ٹرمپ کے الزامات بالکل بے سروپا ہیں۔

ٹرمپ کا نیا الزام

مزید : علاقائی

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...