حقائق کی غلط رپورٹنگ پر اسٹیٹ بینک کی وضاحت

حقائق کی غلط رپورٹنگ پر اسٹیٹ بینک کی وضاحت

کراچی (اکنامک رپورٹر)اسٹیٹ بینک آف پاکستان کے گورنر اور اسٹیٹ بینک کی ٹیم کے لاہور چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے دورے کی خبروں میں سوال و جواب سیشن کے دوران جن حقائق کا تذکرہ آیا ان میں سے کچھ کو غلط رپورٹ کیا گیا ہے۔ ریکارڈ کی درستی اور کسی غلط فہمی کو رفع کرنے کی خاطر یہ وضاحت کی جاتی ہے کہ اس اجلاس میں مندرجہ ذیل حقائق کا ذکر کیا گیا۔ایک سوال پر جس میں ملک کے قرضہ و جی ڈی پی کے کم تناسب کا موازنہ دوسرے ملکوں سے کیا گیا تھا اور اسے حکومتی قرضوں سے منسوب کیا گیا تھا، اسٹیٹ بینک نے جواب دیا کہ قرضہ و جی ڈی پی کے کم تناسب کی ایک وجہ معیشت میں غیررسمی شعبے کی موجودگی ہے۔ نجی شعبے کا قرضہ بڑھ رہا ہے اور بلند ٹیکس و جی ڈی پی تناسب سے اس میں مزید بہتری آ سکتی ہے کیونکہ بلند ٹیکس محاصل حکومت کی قرض کی ضروریات کو کم کریں گے۔گورنر کی تقریر کے دوران کارکنوں کی ترسیلات زر سمیت اہم معاشی اظہاریوں سے متعلق اعدادوشمار بھی سلائیڈ پر دکھائے گئے۔ سلائیڈ کے مطابق مالی سال 16 کے آخر میں کارکنوں کی ترسیلات زر 19.9 ارب ڈالر تھیں اور مالی سال 09 تا مالی سال 13 کی مدت کے دوران اوسطا 11 ارب ڈالرکی ترسیلات زر موصول ہوئیں۔ خبروں میں کہا گیا ہے کہ مالی سال 16 میں اور مالی سال 09 تا مالی سال 13 کی مدت کے دوران ترسیلات زر میں 19.9 اور 11 فیصد نمو ہوئی جو درست نہیں ہے۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر