رمضان شوگرملز ، آشیانہ سکینڈل ، شہباز شریف ، حمزہ دوبارہ طلب

رمضان شوگرملز ، آشیانہ سکینڈل ، شہباز شریف ، حمزہ دوبارہ طلب

  



لاہور(نامہ نگار)احتساب عدالت کے جج سید نجم الحسن نے آشیانہ اقبال ہاؤسنگ سکینڈل کیس میں میاں شہباز شریف سمیت شریک ملزموں کے وقت پر پیش نہ ہونے پر برہمی کا اظہار کیا، عدالت نے شہباز شریف کے وکیل کی جانب سے کیس کے التواء کی استدعامسترد کرتے ہوئے دوگواہوں عارف مجید بٹ اور اسرار سعید کے بیانات قلمبند کرلئے ۔فاضل جج نے ریمارکس دیئے کہ ضمانت منظور ہونے کے بعد شہباز شریف کو وقت پر پیش ہوناچاہیے ، ضمانت کرانے کے بعد پیش نہ ہونے والے ملزموں کے وارنٹ جاری کئے جائیں گے،عدالت نے سابق پرنسپل سیکرٹری فواد حسن فواد اور سابق ڈی جی ایل ڈی اے احد خان چیمہ سمیت شریک ملزموں کو بروقت پیش نہ کرنے پر جیل سپرنٹنڈنٹ اور ایس پی ہیڈ کوارٹرکوشوکازنوٹس جاری کردئیے ہیں۔گزشتہ روز سماعت شروع ہوئی تو لاہور بار کے نائب صدراعجاز بسراء نے عدالت سے استدعا کی کہ سینئر وکیل امجد پرویز سپریم کورٹ میں مصروف ہیں جبکہ میاں شہباز شریف کی کمر میں بھی درد ہے ،کیس کی کاروائی ملتوی کی جائے،عدالت نے کہا کہ شہباز شریف کو پیچھے کرسی پر بٹھا دیا جائے ،عدالت نے آشیانہ کیس کے التواء کی استدعامسترد کی تو شہباز شریف کے وکیل اور فاضل جج کے درمیان تلخ جملوں کا تبادلہ بھی ہوا، فاضل جج نے عدالتی کارروائی سے شہبازشریف کو استثنیٰ دینے کی درخواست منظور کرلی،عدالت نے گزشتہ روز دو گواہوں عارف مجید بٹ اور اسرارسعید کا بیان قلمبند کیا ،عدالت نے رمضان شوگر ملز کیس میں میاں شہباز شریف اور حمزہ شہباز کو ریفرنس کی نقول بھی تقسیم کیں، عدالت نے آشیانہ اوررمضان شوگر ملز کیس کی سماعت 16مارچ تک ملتوی کر دی،رمضان شوگر ملز کیس میں آئندہ سماعت پر شہباز شریف اور حمزہ شہباز شریف پر فرد جرم عائد کئے جانے کا امکان ہے۔پیشی کے موقع پر سکیورٹی کے مدنظر پولیس نے سٹرکوں کو خاردار تاریں لگا کر بند کررکھاتھا جس سے شہریوں کو شدید مشکلات کا سامنا رہا۔

آشیانہ سکینڈل

لاہور(نامہ نگار)احتساب عدالت نے پیراگون سٹی کیس میں خواجہ برادران کے جوڈیشل ریمانڈ میں 19 مارچ تک توسیع کر تے ہوئے آئندہ تاریخ سماعت پر نیب سے حتمی رپورٹ طلب کر لی ہے۔احتساب عدالت کے جج نجم الحسن بخاری نے کیس کی سماعت کی، گزشتہ روز عدالت میں خواجہ سعد رفیق اور سلمان رفیق کو پیش کیا گیا ،عدالت میں خواجہ برادران کے وکلاء نے موقف اختیار کیا کہ خواجہ برادران کی انتہائی تذلیل کی جا رہی ہے، پورا شہر بند کرکے بکتر بند گاڑی میں پیش کیا جاتا ہے، دونوں بھائیوں کے ساتھ ایسا سلوک کیا جا رہا ہے جیسے وہ جنگی قیدی ہوں، عدالت نے قرار دیا کہ سڑکیں بند کرنے کے معاملے کو دیکھ رہے ہیں ، اس مسئلے کو حل کرتے ہیں،خواجہ سعد رفیق نے گزشتہ روز بھی شکوہ کرتے ہوئے عدالت سے کہا کہ انہیں 60سال پرانی بکتر بند گاڑی میں لایا جاتا ہے،کمراور ٹانگ میں درد ہے ،علاج بھی نہیں کروایا جا رہا،کسی ہسپتال نہیں جانا چاہتا مگر عدالت آنے میں تکلیف کا سامنا ہے،عدالت نے خواجہ برادران کے جوڈیشل ریمانڈ میں توسیع کرتے ہوئے مزید سماعت 19 مارچ تک ملتوی کر دی، عدالتی سماعت کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے خواجہ سعد رفیق نے کہا کہ یہ ساری انتقامی کارروائی ہے۔ہم نے پاکستان اور پنجاب کی خدمت کی اسکا صلہ دیا جا رہا ہے،ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ پاکستان انڈیا کے تعلقات میں امن ہونا چاہیے ہم اسکے حامی ہیں،اپوزیشن نے حکومت سے زیادہ ذمہ داری کا مظاہرہ کیا ہے۔دوسری طرف احتساب عدالت کے جج سید نجم الحسن نے سابق وزیراعظم میاں نواز شریف کے پرنسپل سیکرٹری فواد حسن فواد کے خلاف آمدنی سے زائد اثاثے بنانے کے کیس کا ریفرنس آئندہ سماعت پر پیش کرنے کا حکم دیدیا ہے۔عدالت نے دوران سماعت قراردیا کہ آپ ریفرنس بھجوا کر سو جاتے ہیں، فاضل جج نے تفتیشی افسر کو آئندہ سماعت پر ریفرنس ہر صورت پیش کرنے کا حکم دیتے ہوئے سماعت19مارچ تک ملتوی کردی۔گزشتہ روز عدالت میں فواد حسن فواد نے موقف اختیار کیا کہ 9 ماہ کا عرصہ گزر جانے کے باوجود ابھی تک نیب نے ریفرنس پیش نہیں کیا،نیب پراسیکیوٹر نے عدالت کو بتایا ریفرنس چیئرمین نیب کو بھجوایا گیا ہے ،منظوری کے بعد پیش کر دیا جائے گا ،دوران سماعت فواد حسن فواد اور نیب پراسیکیوٹر میں تلخ کلامی بھی ہوئی جس پر فواد حسن فواد نے کہا کہ نو ماہ سے قید ہوں کیا عدالت کو حقائق نہ بتاؤں؟ عدالت نے مذکورہ بالا حکم کے ساتھ کیس کی سماعت آئندہ تاریخ پیشی تک ملتوی کردی۔

مزید : صفحہ اول