امریکا کا بھارت کو دیے گئے جی ایس پی کا درجہ ختم کرنے کا فیصلہ

امریکا کا بھارت کو دیے گئے جی ایس پی کا درجہ ختم کرنے کا فیصلہ
امریکا کا بھارت کو دیے گئے جی ایس پی کا درجہ ختم کرنے کا فیصلہ

  



واشنگٹن (ڈیلی پاکستان آن لائن) جنگ کا محاذ ہو یا تجارت کا میدان، دنیا بھر میں ذلت و رسوائی مودی سرکار کامقدر بن گئی، پاکستان کے بعد امریکا نے بھی بھارت کو بڑا جھٹکا دے دیا۔امریکا نے بھارت کو دیے گئے ( جنرلائزٹ سسٹم آف پری فرنسس) جی ایس پی کا درجہ ختم کرنے کا فیصلہ کرلیا جس کے بعد بعض ممالک کو اشیاء پر ڈیوٹی فری حاصل ہے۔

امریکا کی جانب سے جی ایس پی کا درجہ تجارتی ایکٹ 1974 کے تحت دیا جاتا ہے جس کا مقصد ترقی پذیر ممالک میں اقتصادی نمو کی بہتری لانا ہوتا ہے اور اس پروگرام پر یکم جنوری 1976 سے عمل کیا جارہا ہے۔امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے بھارت کو دیے گئے جی ایس پی کا درجہ ختم کرنے سے متعلق فیصلے سے خط کے ذریعے کانگریس کو آگاہ کردیا۔خط میں کہا گیا ہے کہ امریکا سے تجارتی مفاد لینے کے لیے بھارت یقین دہانیاں کرانے میں ناکام رہا جب کہ بھارت اپنی منڈیوں تک امریکا کو رسائی دینے کی یقین دہانیاں کرانے میں بھی ناکام رہا ہے۔

امریکی صدر نے خط میں لکھا کہ بھارت نے اپنی منڈیوں میں امریکی مصنوعات کی مساوی رسائی کی یقین دہانی نہیں کرائی، بھارت 5 اعشاریہ 7 ارب ڈالر کی مصنوعات بغیر ڈیوٹی امریکا برآمد کر سکتا تھا۔ اس فیصلے کے بعد 2 ہزار بھارتی مصنوعات متاثر ہوں گئیں جن میں آٹو ٹیکسٹائل پروڈکٹس شامل ہیں۔

امریکی تجارتی نمائندگان آفس کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ بھارت اور ترکی جی ایس پی پروگرام سے باہر نکل چکے ہیں اس لیے وہ اس پروگرام سے مزید فائدہ نہیں اٹھا سکتے۔

مزید : اہم خبریں /بین الاقوامی