”سندھ حکومت چاہتی ہی نہیں کہ صوبے میں کام ہو “سپریم کورٹ کے جسٹس گلزار احمد نے یہ ریمارکس کونسے کیس میں دیئے ؟ جانئے

”سندھ حکومت چاہتی ہی نہیں کہ صوبے میں کام ہو “سپریم کورٹ کے جسٹس گلزار احمد ...
”سندھ حکومت چاہتی ہی نہیں کہ صوبے میں کام ہو “سپریم کورٹ کے جسٹس گلزار احمد نے یہ ریمارکس کونسے کیس میں دیئے ؟ جانئے

  



اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن )سپریم کورٹ نے نئی گاج ڈیم کو فوری تعمیر کرنے کا حکم جاری کر دیا ہے ، جسٹس گلزار احمد نے ریمارکس جاری کرتے ہوئے کہا کہ سندھ حکومت کو شائد 2010 کا سیلاب بھول چکا ہے ۔عدالت نے سماعت ایک ماہ کیلئے ملتوی کر دی ہے ۔

سپریم کورٹ میں نئی گاج ڈیم کی تعمیر سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی جس دوران جسٹس گلزار احمد نے وفاق اور سندھ حکومت پر سخت برہمی کا اظہار کرتے ریمارکس دیئے کہ بارشوں کا پانی سمندر میں گر کر ضائع ہو جائے گا ، سندھ حکومت کو شائد 2010 کا سیلاب بھول چکا ہے، ۔

سپریم کورٹ نے عدالتی فیصلے پر وزارت قانون سے رائے مانگنے پر کابینہ ڈویژن کو نوٹس جاری کر دیا ہے جبکہ پلاننگ ڈویژن اور سیکریٹری آبپاشی سندھ سے عملدرآمد رپورٹ بھی طلب کر لی گئی ہے ۔

عدالت نے ریماکس جاری کرتے ہوئے کہا کہ وفاق اور سندھ واپڈا کو فنڈز کی فراہمی یقینی بنائے ، عوامی مفاد کے کام ایک دوسرے کے کندھے پر ڈال دیئے جاتے ہیں ۔ جسٹس گلزار احمد نے ریماکس دیئے کہ وفاق اور سندھ کے درمیان رابطہ نہیں ؟ ڈپٹی اٹارنی جنرل نے عدالت میں بتایا کہ سندھ حکومت نے تاحال فنڈز دینے پر جواب نہیں دیا ، وفاقی حکومت اپنے حصے کے فنڈز دینے پر آمادہ ہے ۔

جسٹس گلزار نے ریمارکس جاری کرتے ہوئے کہا کہ سندھ حکومت کی کام کرنے کی نیت نہیں ہے ، سندھ حکومت چاہتی ہی نہیں کہ صوبے میں کام ہو ، سندھ حکومت کو آخر مسئلہ کیا ہے ؟ ، تیس سال سے نئی گاج ڈیم کا معاملہ چل رہاہے ، ہر سال رقم مختص کر کے ضائع کر دی جاتی ہے ۔

مزید : قومی


loading...