چین پہنچنے پر اب آپ کا کورونا ٹیسٹ کس طرح کیا جائے گا؟ جان کر آپ جانے سے ہی گھبرانے لگیں گے

چین پہنچنے پر اب آپ کا کورونا ٹیسٹ کس طرح کیا جائے گا؟ جان کر آپ جانے سے ہی ...
چین پہنچنے پر اب آپ کا کورونا ٹیسٹ کس طرح کیا جائے گا؟ جان کر آپ جانے سے ہی گھبرانے لگیں گے

  

بیجنگ(مانیٹرنگ ڈیسک) چین میں چند ہفتے قبل ایک تحقیق میں بتایا گیا تھا کہ کورونا ٹیسٹ کے لیے سیمپل منہ اور ناک کی بجائے مقعد سے لیا جائے تو نتائج کہیں زیادہ درست اور حتمی ہوتے ہیں۔ اس کے بعد سے چینی حکومت نے لوگوں کی مقعد سے سیمپل لینے شروع کیے تھے اور اب بیرون ممالک سے جانے والوں کے سیمپل مقعد سے لینا لازمی قرار دے دیا گیا ہے جس پر ایک نیا تنازعہ کھڑا ہو گیا ہے اور دیگر ممالک اسے ہتک آمیز قرار دے رہے ہیں۔ 

انڈیا ٹائمز  کے مطابق جاپان وہ پہلا ملک ہے جس نے چین کو شکایت کی ہے اور مطالبہ کیا ہے کہ چین جانے والے جاپانی شہریوں کے کورونا ٹیسٹ کے لیے سیمپل مقعد سے نہیں بلکہ ناک اور منہ سے لیے جائیں۔ جنوبی کوریا نے بھی چینی حکومت کے اس اقدام پر احتجاج کیا جس کے بعد چینی حکام کی طرف سے چین آنے والے جنوبی کورین شہریوں کو اس قدر رعایت دے دی گئی کہ وہ اپنا پاخانہ سیمپل کے طور پر مہیا کر دیں، چینی عملہ براہ راست اس کی مقعد سے سیمپل نہیں لے گا۔

رپورٹ کے مطابق دارالحکومت بیجنگ سمیت چین کے کئی شہروں میں چینی شہریوں کے کورونا ٹیسٹ سیمپل بھی مقعد سے لیے جا رہے ہیں۔ گزشتہ ہفتے امریکی محکمہ خارجہ کا ایک وفد چین گیا تھا جس کے متعلق امریکی میڈیا آﺅٹ لیٹ ’وائس ‘ (Vice)نے اپنی رپورٹ میں بتایا تھا کہ اس وفد میں شامل حکام کے سیمپل بھی مقعد سے لیے گئے تھے، تاہم وائس کی اس رپورٹ کو چینی وزارت خارجہ نے مسترد کر دیا تھا۔ 

مزید :

بین الاقوامی -کورونا وائرس -