100 بد نام زمانہ بد معاشوں کی گرفتاری کیلئے 100 شارپ کوپس کو منتخب کر لیا گیا

100 بد نام زمانہ بد معاشوں کی گرفتاری کیلئے 100 شارپ کوپس کو منتخب کر لیا گیا

لا ہور (کرا ئم سیل )سی سی پی او لاہور کیپٹن (ر)محمد امین وینس نے کہا ہے کہ شہر میں کسی بھی غنڈے یا بدمعاش کو شریف شہریوں کو پریشان یا ہراساں کرنے کا موقع نہیں دیا جائے گا اور اس مقصد کے حصول کے لئے شہر کے 100 بدنام زمانہ بدمعاشوں کی فہرست تیار کر کے ان بدمعاشوں کو قانون کے کٹہرے میں لانے کے لئے 100 ’’شارپ کوپس‘‘کو سلکٹ کیا گیا ہے جو معاشرے کے ان ناسوروں کو قانون کی گرفت میں لانے کے لئے ہر قانونی طریقہ استعمال کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ ان بدمعاشوں کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کے لئے متعلقہ حکام سے رابطہ کیا جا رہا ہے اور ان بدمعاشوں میں سے اگر کوئی باہر چلا گیا ہے تو اس کے ریڈ وارنٹ جاری کروا کر اسے گرفتار کر کے واپس لایا جائے گا ۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے پولیس لائنز قلعہ گجر سنگھ میں’’ شارپ کوپس‘‘ کے پراجیکٹ کی لانچنگ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا جس میں ڈی آئی جی آپریشنز ڈاکٹر حیدر اشرف ، ایس ایس پی انویسٹی گیشن رانا ایاز سلیم ایس پی سی آئی اے محمد عمر ورک ، ایس پی سی آر او عمر ریاض چیمہ کے علاوہ تمام ڈویژنل ایس پیز اور قتل سمیت مختلف سنگین مقدمات کے مدعیوں کی بہت بڑی تعداد موجو د تھی۔اس موقع پر ایس ایس پی انویسٹی گیشن رانا ایاز سلیم نے شارپ کوپس کے پراجیکٹ کے حوالے سے سی سی پی او کو بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ ان پولیس ٹیموں میں نہایت منجھے ہوئے اورتجربہ کارپولیس اہلکاروں کو شامل کیا گیا ہے جنہیں ان 100 بدمعاشوں کی گرفتاری پر مامور کیا گیا ہے جو ان بدمعاشوں کے خلاف درج مختلف مقدمات کے مدعیوں سے مسلسل رابطے میں رہ کر نہ صرف معلومات کا تبادلہ کریں گے بلکہ ان مدعیوں کے تحفظ کو بھی یقینی بنائیں گے ۔ کیپٹن (ر)محمد امین وینس نے کہا ہے کہ جو پولیس ٹیم ان 100 بدمعاشوں میں سے کسی کو بھی گرفتار کرے گی اس کو انعام و اکرام سے نوازا جائے گا انہوں نے کہا کہ ان بدمعاشوں کو گرفتار کرنے کیلئے شارپ کوپس کے نام سے تشکیل دی گئی100 پولیس ٹیموں کو وسائل کی کمی کسی صورت نہیں آنے دی جائے گی اور ریڈز کے لئے وافر فنڈز بھی مہیا کیے جائیں گے جبکہ شارپ کوپس کو لاہور پولیس کے افسران کی مکمل سپورٹ حاصل ہوگی ۔ایک مقدمہ کے مدعی کی طرف سے حمزہ عر ف ہنی نامی بدمعاش جو ڈکیتی اور اقدام قتل درجنوں وارداتوں میں ملوث ہے کی گرفتاری کے مطالبے پر سی سی پی او لاہو رنے ایس ایس پی انویسٹی گیشن راناایاز سلیم کو 5 دن کے اندر اندر ملزم کی گرفتاری کا حکم دیا۔صحافیوں کے سوالوں کا جواب دیتے ہوئے سی سی پی او نے کہا کہ ان بدمعاشوں کو اگر کسی نے پناہ دینے کی کوشش کی یا کوئی ان کی پشت پناہی میں ملوث پایا گیا تو وہ خواہ کتنا ہی بااثر کیوں نہ ہو اس کے خلاف بھی مقام و مرتبے کا لحاظ کیے بغیر سخت کاروائی عمل میں لائی جائے گی ۔ ایک اور سوال کا جواب دیتے ہوئے سی سی پی او نے کہا کہ لا ہور میں کسی سیاسی جماعت کا کوئی عسکری ونگ نہیں ہے اور اگر آپ کے علم میں ایسا کچھ ہے تو اس بارے میں مجھے بتائیں اس کے خلاف بلا خوف و خطر قانونی کاروائی کی جائے گی ۔ایک اور سوال کے جواب میں سی سی پی او نے کہا کہ اگر کوئی پولیس افسر ان بدمعاشوں کے سہولت کار کے طور پر کام کرتا پایا گیا تو اسے نشان عبرت بنا دیا جائے گا۔

مزید : علاقائی


loading...