این آر او مانگنے اور دینے والے دونوں پر لعنت بھیجتے ہیں ،شاہد خاقان عباسی

  این آر او مانگنے اور دینے والے دونوں پر لعنت بھیجتے ہیں ،شاہد خاقان عباسی

  

نارووال(مانیٹرنگ ڈیسک ،نامہ نگار،صباح نیوز،آن لائن)سابق وزیراعظم اور مسلم لیگ (ن) کے سینئر نائب صدر شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ عمران خان ہی بتائیں گے کہ کون این آر او مانگ رہا ہے، این آر او مانگے اور دینے والے دونوں پر لعنت ہے۔نارووال میں پیغام کانفرنس سے خطاب اور میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ ’ عمران خان احتساب کرو ہم تمہارا بھی احتساب کریں گے، ہم چاہتے ہیں کہ احتساب ہو‘۔انہوں نے کہا کہ ’ملک کا سب سے بڑا ٹیکس چور عمران خان ہے، عوام کے عطیات چوری کرنے والا بھی عمران خان ہے اور ہم اس کے ثبوت دینگے‘۔ایک سوال کے جواب میں مسلم لیگ (ن) کے سینئر نائب صدر نے کہا کہ پارٹی میں کوئی گروپ بندی نہیں اور نہ ہوسکتی ہے، یہ ایک جماعت ہے، اس سے پہلے بھی لوگوں نے یہ باتیں کرنے کی کوشش کی لیکن یہ خام خیالی ذہن سے نکال دیں، نوازشریف، شہبازشریف، احسن اقبال اور میرا بیانیہ ایک ہے‘۔شاہد خاقان عباسی نے کہاکہ ’کھلے ذہن سے کان کھول کر سن لیں، بیانیہ یہ ہے کہ پاکستان آئین اور قانون کے مطابق چلنا چاہیے، تمام ادارے آئینی حدود میں رہ کر ملکی ترقی اور سالمیت کے لیے کام کریں، کوئی جھگڑا کوئی ناراضی نہیں، پاکستان کے عوام کو تکلیف ہے، اس کے لیے سب مل کر کام کریں۔سابق وزیراعظم نے کہا کہ عوام تکلیف میں ہیں، مہنگائی دگنی ہوئی ہے، ملک کی ترقی 8 ماہ میں آدھی ہوچکی ہے، اب بھی وقت ہے عمران خان سنبھل جائیں، ورنہ سیاست پیچھے رہ جائے گی اور عوام آگے ہوں گے پھر ملک میں آمریت کا خطرہ ہے۔شہبازشریف کی واپسی سے متعلق شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ ’شہبازشریف واپس آئیں گے۔شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ اگر ہم نے پاکستان کو ترقی دینی ہے تو ہمیں انتہاپسندی ختم کرنی ہو گی۔مسلم لیگ (ن) کے سیکرٹری جنرل احسن اقبال نے کہا ہے کہ ملکی ترقی کیلئے دہشت گردی کا خاتمہ ناگزیز ہے ۔انہوں نے کہا کہ انٹرنیشنل اسلامک انسٹیٹیوٹ فار پیس کی بنیاد رکھ رہے ہیں جو کہ عالمی سطح کا ادارہ ہو گا اور اس کے 3شعبے ہوں گے جس میں پہلا شعبہ بین الامسالک اور بین المذاہب ہم آہنگی کےلئے کام کر ے گا اور دوسرا شعبہ دنیا میں عالمی سطح پر بین التہذیب مکالمے کو آگے بڑھائے گا ۔تیسرا شعبہ پاکستان کو انتہا پسندی و دہشتگردی کےخلاف جنگ میں ہونے والے نقصان کو ڈاکو منٹ کرے گا ۔کانفرنس سے ڈاکٹر ریاض محمود یونیورسٹی آف گجرات،ڈاکٹر فہیم وائس چانسلر،پروفیسر ڈاکٹر قبلہ ایاز چیئر مین اسلامی نظریاتی کونسل حکومت پاکستان،علامہ نیاز حسین وائس پریذیڈنٹ ملی یکجہتی کونسل،رمیش سنگھ اروڑا، سابق ایم پی اے،ڈاکٹر جیم چنن ڈائریکٹر پیس سینٹر لاہور،محمد راغب نعیمی مہتم جامعہ نعیمیہ لاہور، مولانا عبدالخبیر آزاد چیئر مین مجلس علمائے پاکستان خطیب امام بادشاہی مسجد لاہور،رانا شفیق پسروری ممبر اسلامی نظریاتی کونسل،ایڈمرل ریٹائرڈ ہشام بن صدیق، سید خورشید شاہ نے ٹیلیفونک ،پروفیسر ڈاکٹر محمد ضیا الحق ڈائریکٹر جنرل ادارہ تحقیقات اسلامی ،بین الاقوامی اسلامی یونیورسٹی، احمد اقبال چیئر مین ڈسٹرکٹ کونسل و دیگر نے بھی خطاب کیا۔بعد ازاں ادارہ تحقیقات اسلامی ،بین لاقوامی اسلامی یونیورسٹی کی جانب سے امن کے حوالہ سے کی جانے والی کاوشوں کو سراہتے ہوئے پہلا ایوارڈ دیا گیا۔

پیغام کانفرنس

لاہور(جنرل رپورٹر،این این آئی)پاکستان مسلم لیگ (ن)نے مرکزی اور صوبائی سطح پر تنظیم نو کے بعد کوپارٹی ہر سطح پر فعال اور متحرک کرنے اورحکومتی پالیسیوں کے خلاف پارلیمنٹ کے اندر اور باہر بھرپور احتجاج کا فیصلہ کر لیا۔ تفصیلات کے مطابق مسلم لیگ (ن) کے نو منتخب عہدیداروں کا ماڈل ٹاﺅن میں اجلاس ہوا ۔ پنجاب کے صدر رانا ثنا اللہ خان ، مرکزی سینئر نائب صدر شاہد خاقان عباسی ، سیکرٹری جنرل احسن اقبال، سینیٹر پرویز رشید، پرویز ملک ، شائستہ پرویز، خواجہ عمران نذیر ، کرنل (ر ) مبشر جاوید ، عطاءاللہ تارڑ سمیت دیگر رہنماءشریک ہوئے ۔ اجلاس میں نواز شریف کی 7مئی کو کوٹ لکھپت جیل واپسی کی حکمت عملی سمیت مجموعی صورتحال اور آئندہ کی حکمت عملی کے بارے میں تفصیلی تبادلہ خیال کیا گیا ۔ اجلاس کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے رانا ثنا اللہ خان نے کہا کہ پارٹی کو فعال اور متحرک کرنے کےلئے میدان میں نکلے ہیں ،پارٹی کو ڈویژنل اور ضلع کی سطح پر فعال کرنے کےلئے ری آرگنائز کیاجائے گا۔ انہوں نے کہا کہ نوازشریف کو مستقل ضمانت نہیں دی گئی ،ان کابنیادی حق تھا کہ انہیں طبی بنیادوں پر ضمانت دی جاتی اورایسی بے شمار مثالیں موجود ہیں ،سپریم کورٹ کا فیصلہ مایوس کن اور اس پر تشویش ہے ۔ انہوں نے کہا کہ نواز شریف کی7 مئی شام تک ضمانت ہے او روہ خود کوٹ لکھپت جیل جائیں گے ۔ انہوں نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ چودھری نثار کے معاملے میں بات ہو سکتی ہے ۔تنظیم نو کے ذریعے شہباز شریف کی ٹیم بے دخل اور نواز شریف کی ٹیم ان ہو نے کے سوال کا جواب دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ نواز شریف کی ٹیم شہباز شریف کے دستخطوں کے ساتھ ان ہوئی ہے ۔ابھی پہلا مرحلہ ہے ،سنٹرل ورکنگ کمیٹی اور سنٹرل ایگزیکٹو کمیٹی ری آرگنائز ہوں گی ۔اس موقع پر شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ (ن) لیگ کا وہی بیانیہ ہے جو نواز، شہباز اور کارکنوں کا بیانیہ ہے۔کیا ووٹ کو عزت نہیں ملنی چاہیے کوئی پاکستانی نہیں کہتا کہ ووٹ کو عزت نہ دو ۔انہوں نے کہا کہ شہبازشریف آٹھ سے دس روز میں واپس آ جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ چودھری نثار سے (ن) لیگ نے کوئی رابطہ نہیں کیا،دل میں اور پارٹی میں چودھری نثار کےلئے جگہ موجودہے۔احسن اقبال نے کہا کہ مریم نواز کے سر گرم ہونے سے پارٹی کوتقویت ملے گی۔ احسن اقبال نے کہا کہ پارٹی کی تنظیم نو میں تھوڑی تاخیر ہوئی ہے لیکن اب چوبیس گھنٹے کام کریں گے ۔انہوں نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ شہبازشریف نوازشریف ٹیم کے اوپننگ بیٹسمین ہیں ۔احسن اقبال نے کہا کہ یہ پہلا مرتبہ ہوا ہے کہ آئی ایم ایف کے پیکیج کے ساتھ وزیر خزانہ ، گورنر سٹیٹ بینک اور چیئرمین ایف بی آر کو بھی تبدیل کر دیا گیا ۔

مسلم لیگ

مزید :

صفحہ اول -