کیپ کا مہنگے پھلوں کی خریداری کی بائیکاٹ مہم شروع کرنے کا اعلان

کیپ کا مہنگے پھلوں کی خریداری کی بائیکاٹ مہم شروع کرنے کا اعلان

کراچی (اسٹاف رپورٹر)صارفین کی نمائندہ تنظیم کنزیومرز ایسو سی ایشن آف پاکستان نے رمضان کے پہلے عشرے میں مہنگے پھلوں کی خریداری کی بائیکاٹ مہم شروع کرنے کا اعلان کردیا ہے یہ بات کنزیومرز ایسو سی ایشن آف پاکستان کے چیئر مین کوکب اقبال نے اپنے دفتر میں میڈیا کے نمائندوں سے بات کرتے ہوئے کہی انہوں نے کہا کہ رمضان المبار ک کی آمد سے قبل ذخیرہ اندوزوں نے مارکیٹ سے پھل غائب کر دیئے ہیں تاکہ وہ رمضان المبارک کے آغاز سے ہی صارفین کو مہنگے داموں اپنی مرضی کے نرخوں پر پھل فروخت کرکے صارفین کی جیبوں پر ڈاکہ ڈال سکیں کوکب اقبال نے کہا کہ گزشتہ کئی سالوں سے اشیاءخردونوش پھلوں اور سبزیوں کی قیمتوں میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے اور اس سال بھی گرانی اپنے عروج پر پہنچ گئی ہے انہوں نے کہاکہ کنٹرولر جنرل پرائسز کمشنر کراچی افتخار شلوانی نے تمام تجارتی ایسوسی ایشنز اور کنزیومرز ایسو سی ایشن آف پاکستان کے ساتھ پچھلے کئی ہفتوں سے میٹنگیں کر رہے ہیں تاکہ رمضان المبارک میں مہنگائی کو کنٹرول کیا جا سکے مگر ایسا معلوم ہوتا ہے کہ منافع خور تاجروں نے اپنی اشیاءصارفین کو مہنگے داموں فروخت کرنے کے لئے کمر کس لی ہے کوکب اقبال نے کہا کہ مہنگے پھلوں کی فروخت رمضان المبارک کے پہلے عشرے میں عروج پر ہوتی ہے اس لئے کنزیومرز ایسو سی ایشن آف پاکستان کی جانب سے پھلو ں کی خریداری کی بائیکاٹ مہم کا پہلے ہی عشرے سے آغاز کیا جا رہا ہے تاکہ طلب اور رسد کا فرق ختم کیا جاسکے انہوں نے کہا کہ گزشتہ دو سالوں میں پھلوں کی بائیکاٹ مہم کے بہت اچھے نتائج برآمد ہوئے ہیں کوکب اقبال نے صارفین سے اپیل کرتے ہوئے کہا کہ وہ مہنگی اشیاءکی خریداری بند کردیں تو اشیاءخوردونوش اور پھلوں کی قیمتیں خود با خوداپنی اصل سطح پر واپس آ سکتی ہیں انہوں نے ضلعی انتظامیہ اور خصوصاََ ڈپٹی کمشنر زسے مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ وہ صارفین کو سستی اور معیاری اشیاءاور خصوصاََ پھلوں کی قیمتوں کو اپنے اپنے علاقوں میں ٹیموں کے ذریعے چیک کریں اور چیکنگ کے نظام کو بہتر سے بہتر بنائیں تاکہ ذخیرہ اندوزوں اور ناجائز منافع خوروں کو پکڑا جا سکے کوکب اقبال نے کہا کہ منافع خوروں پر جرمانہ کرنے کے بجائے انہیں جیل بھیجا جانا چاہئے چونکہ جرمانے کی رقم سے صارفین کو کوئی فائدہ نہیں ہوتا جبکہ جرمانے کی رقم حکومت کے خزانے میں جمع ہوجاتی ہے انہوں نے مزید کہا کہ ملاوٹ کرنے والے بھی کسی رعایت کے مستحق نہیں انہیں بھی قانون کے مطابق سخت ترین سزائیں دینی چاہئیں اور قانون میں ترمیم کرکے ملاوٹ کی سزا کو عمر قید یا پھانسی ہونی چاہئے چونکہ ملاوٹ سے انسانی زندگی کو نقصان پہنچتا ہے

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر