پنجاب اسمبلی، ٹریوال ایجنسی ترمیمی سمیت مختلف بل ایوان میں پیش 

پنجاب اسمبلی، ٹریوال ایجنسی ترمیمی سمیت مختلف بل ایوان میں پیش 

  

  

    لاہور(نمائندہ خصوصی)پنجاب اسمبلی کا اجلاس 2گھنٹے 50 منٹ کی تاخیر سے سپیکر پنجاب اسمبلی چوہدری پرویز الٰہی کی صدارت میں شروع ہو ااجلاس کے آغاز پر سیکرٹری اسمبلی نے رواں اجلاس کیلئے چار پینل آف چیئر مین میاں محمد شفیع، عبداللہ وڑائچ، سردار محمد اویس دریشک،اور ذکیہ شاہ نواز کا اعلان کیا جس کے بعد ایجنڈا کو معطل کرنے کیلئے قرارداد وزیرقانون نے ایوان میں پڑھی جس کے بعد سپیکر کی اجازت سے اپوزیشن کے رکن سردار اویس لغاری نے نکتہ اعتراج پر بات کرتے ہوئے کہا کہ وزیر اعلیٰ پنجاب کب تک چھپتے رہیں گے حکومت بتائے کیا وہ خواتین کے حقوق کے ساتھ کھڑی ہے یا نہیں خواتین افسران فیلڈ میں کام کررہی ہیں، آفیسر کی توہین تو کی گئی عورت کی بھی توہین کی گئی ہے، کاٹن کی حالت اس وقت بدترین ہوچکی ہے، ساؤتھ پنجاب کے معاملات پر ہمیں حکومت سے جواب چاہیے، زرعی علاقوں کو تباہ کیا جارہا ہے وزیر اعلیٰ پنجاب خود آکر پنجاب کے عوام کو جواب دیں، ڈیرہ غازی خان میں میرے تین افراد کو قتل کردیا گیا، کوئی قانون نظر نہیں آرہا،ا س کے بعد ایوان میں ممبر پنجاب اسمبلی وارث شاد کلو،ایم پی اے سعدیہ سہیل کے والد،اورسینئر صحافی ضیاء شاہد کیلئے درجات کی بلندی اور دعا مغفرت کی گئی اس موقع پر سپیکر نے رولنگ دیتے ہوئے کہا کہ ختم نبوت ہمارا ایمان ہے اس میں کوئی دوسری رائے نہیں ہے۔وزیر اعظم انٹرنیشنل سطح پر بھی یہ واضح کریں گے اسمبلی اور تمام پولیٹیکل پارٹیز کا کریڈٹ ہے پہلی مرتبہ پنجاب اسمبلی میں متفقہ طور پر ختم نبوت صلی اللہ علیہ وسلم پر کام کیا گیا ہے تمام تعلیمی اداروں کی بکس میں جہاں جہاں حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کا نام آئے وہاں اس کے ساتھ آخری نبیؐ بھی لکھا اور پڑھا جائے گا۔ پنجاب اسمبلی کے ایوان میں معروف صحافی ضیا شاہد اور آئی اے رحمن کے انتقال پر تعزیتی اور انہیں ان کی صحافی خدمات پرخراج عقیدت کی قرار داد پیش کی گئی جسے متفقہ طور پر منظور کر لیا گیا،یہ قرارداد صوبائی وزیر قانون راجہ بشارت نے پیش کی اس موقع پر سمیع اللہ خان نے سابق رکن اسمبلی مرحوم وارث شاد کلو کی تعزیتی قرارداد پیش کی جسے حکومت نے متفقہ طور پر منظور کرلیا   رکن اسمبلی سید صمصام بخاری نے ایوان میں گفتگوکرتے ہوئے کہا کہ مذہبی معاملات پر انتشار کے بجائے محبت کا درس دیاجائے، پنجاب اسمبلی کے اجلاس میں پرائیویٹ ممبر ڈے کے موقع پر سرکاری کارروائی کا آغاز کرنے پر اپوزیشن ممبران کا شور شرابا، اپوزیشن کا ایجنڈا کی کاپی فراہم کرنے کا مطالبہ کیاتاہم اپوزیشن کے شور شرابا کے باوجود صوبائی وزیر قانون راجہ بشارت نے بل ایوان میں پیش کر دیا پنجاب اسمبلی میں پنجاب موزیم بورڈ 2021 ایوان پنجاب ٹریول ایجنسی ترمیمی بل پنجاب پرونشل بل لاہور رنگ روڈ اتھارٹی بل اورپنجاب کمیشن ریگولر بل ایوان میں پیش کر دیا گیا گزشتہ روز پنجاب اسمبلی کے ایوان نے پنجاب لوکل گورنمنٹ ترمیمی بل،لاہور سینٹرل بزنس ڈسٹکٹ ڈویلپمنٹ اتھارٹی بل،راوی اربن ڈویلپمنٹ اتھارٹی ترمیمی بل،ایمرسن یونیورسٹی ملتان،پنجاب لیٹرز آف ایڈمنسٹریشن اینڈ سکسیشن سرٹیفکیٹ،پنجاب انفورسمنٹ آف ویمنز پاورٹی رائٹسبل،پنجاب لوکل گورنمنٹ دوسرا ترمیمی بل،پراونشل، ایمپلائیز سوشل سیکیورٹی ترمیمی بل،پنجاب انفیکٹس ڈیزیزز بل،اور پنجاب لوکل گورنمنٹ ترمیم بل کثرت رائے سے منظور کر لئے، اس موقع پر حکومت کی جانب سے پرائیویٹ ممبر ڈے پر سرکاری کاروائی کرنے پر اپوزیشن نے شدید احتجاج کیا، حکومت کی غیر سرکاری ڈے پر سرکاری کارروائی کو غیرقانونی اور غیر آئینی قرار دیدیا اپوزیشن کا کہنا تھا کہ پرائیویٹ ممبر ڈے پر سرکاری کاروائی نہیں ہو سکتی۔جتنے آرڈیننس اور مسودہ قانون متعارف کرائے گئے ہیں وہ ایجنڈے سے ہٹ کر ہیں۔ہم اس غیر آئینی اور غیر قانونی کارروائی کا حصہ نہیں بن سکتے۔اپوزیشن ممبران نعرے بازی لگاتے ہوئے ایوان کی کارروائی سے واک آؤٹ کر گئے  ایجنڈا مکمل ہونے پر سپیکر نے اجلاس آج صبح11بجے تک ملتوی کردیا۔

پنجاب اسمبلی اجلاس

مزید :

صفحہ آخر -