نشتر ہسپتال، 57وینٹی لیٹر ز سمیت اہم مشینری خراب، صورتحال سنگین

نشتر ہسپتال، 57وینٹی لیٹر ز سمیت اہم مشینری خراب، صورتحال سنگین

  

 ملتان (  وقا ئع نگار  ) جنوبی پنجاب کی سب سے بڑے علاج گاہ کی انتظامیہ کی لاپرواہی کھل کر سامنے آگئی۔نشتر ہسپتال میں "کروڑوں روپے مالیت کے 57 وینٹی لیٹرز سمیت اہم نوعیت کی 147 مشینری خراب" پڑی ہیں۔جسکی ٹھیک کروانے کیلئے کوئی" ولی وارث "نہیں بنتا۔جبکہ مشنری خراب ہونے سے مریضوں کو علاج معالجہ میں دشواری کا سامنا ہے۔ذرائع سے معلوم ہوا ہے نشتر ہسپتال کو جنوبی پنجاب کی سب سے بڑی علاج گاہ کا درجہ حاصل ہے۔جہاں روزانہ ہزاروں کی تعداد میں مریض علاج و معالجہ کی غرض سے آتے ہیں۔نشتر ہسپتال میں جنوبی پنجاب کے علاہ صوبہ سندھ صوبہ بلوچستان اور خیبر پختونخوا سے بھی مریض آتے ہیں۔لیکن بد قسمتی سے اتنے بڑے انسٹی ٹیوٹ میں انتظامیہ نے لاپرواہی کی انتہا کی ہوئی ہے۔جسکی وجہ سے مریض بھی پریشان ہے۔کیونکہ زیادہ تر مذکورہ ہسپتال کی مشینری خراب پڑی رہتیں ہیں۔ذرائع کے مطابق نشتر ہسپتال میں کوڈ وارڈ آئی سی یو میں تین وینٹی لیٹر۔وارڈ نمبر 8/A آئی سی یو میں (30) وینٹی لیٹر۔وارڈ نمبر 8 ایچ ڈی یو میں ایک وارڈ نمبر 14 میں تین وینٹی لیٹرز۔وارڈ نمبر 19 میں آئی سی یو  04  وینٹی لیٹرز۔وارڈ نمبر 20 میں دو۔ وینٹی لیٹرز۔وارڈ نمبر 22 آئی سی یو میں 10 وینٹی لیٹرز خراب پڑے ہیں جن کی مالیت کروڑوں روپے بتائی جارہی ہے۔اسی طرح وارڈ نمبر ایک میں 04 ایک سی جی مشین۔ایک ڈیفی برلیٹرز (defibrillator) مشین اور ایک انجوگرافی مشین۔وارڈ نمبر 23 ایک انکوبیٹر۔سکر مشین۔وارڈ نمبر 05 نمبیولائزر  (nebulizer)مشین۔وارڈ نمبر چھ میں ایک  کارڈیک مانیٹر۔وارڈ نمبر 07 میں ایک بی پی اپریٹس۔اور ای سی جی مشین۔وارڈ نمبر آٹھ کوڈ آئی سی یو میں کارڈیک مانیٹر۔وارڈ نمبر 08 /A آئی سی یو میں سے 05 کارڈیک مانیٹر۔06 سکر مشینیں۔وارڈ نمبر دس(A)سے ایک اولمپس واشر (olympus washer).وارڈ نمبر 13 سے ایک الٹرا ساونڈ مشین۔وارڈ نمبر 14 سے  چار کارڈیک مانیٹر۔اور 15 فولر بیڈز خراب ہے ہیں۔اسی طرح وارڈ نمبر 16 میں چار کارڈیک مانیٹر۔وارڈ نمبر 19 میں تین ایل ای ڈی  فوٹو تھراپی۔وارڈ نمبر 20 میں سے دو انفینٹ وارمر (infant warmer) این آئی سی یو میں ایک انکوبیٹر۔وارڈ نمبر 22 آئی سی یو  اور وارڈ نمبر 23 میں ایک  ایک زیرو ٹو فٹنگ ۔اور وارڈ نمبر 23 میں پانچ زیرو ٹو فٹنگ۔وارڈ نمبر 28 آئی سو لیشن میں ایک  پی یو وی اے مشین۔وارڈ نمبر 29 آئی سو لیشن میں سے ایک ای سی جی مشین۔وارڈ نمبر 30 میں ایک ایکسرے مشین سٹیٹک اور ایک ایکسرے مشین پورٹ ایبل۔نیورو او ٹی ایک موبائل سی ارم۔سیلنگ آپریشن لائٹ۔ارتھو او ٹی چار ڈرل مشین۔اور ایک سکر مشین۔ناک کان گلے کی او ٹی میں ایک مائیکرو سکوپ۔اولڈ ڈائیلسز یونٹ میں ایک آر او سسٹم اور دو ہیمو ڈائیلسز مشین (hemodialysis machine)۔نشتر ہسپتال لیبارٹری کی دو سنٹریفویجی مشین (centrifuge machine)۔سی ایس ایس ڈی کا ایک آر او سسٹم۔دو واشر ڈسنفیکٹر۔ائیر کمپریسر۔سیلری  مشین آپریشن ٹیبل وغیرہ بھی خراب پڑیں۔ذرائع کے مطابق نشتر ہسپتال میں مشینری کی مرمت کیلئے حکومت کی جانب سے کروڑوں روپے مختص کیئے ہوتے ہیں۔جن کے ذریعے ان مشنریوں کو ٹھیک کروایا جاسکتا ہے۔مگر نشتر ہسپتال انتظامیہ اسکو فنڈ کو دوسروں کاموں کی لگا دیتے ہیں۔جس سے مریضوں کو مشکلات کا سامان کرنا پڑتا ہے۔مریضوں نے مذکورہ صورت حال پر فوری نوٹس لینے کا مطالبہ ہے۔

صورتحال سنگین

مزید :

صفحہ اول -