سردیوں میں سی این جی سیکٹر کو مکمل طور پر گیس بند نہ کرنے کا فیصلہ

سردیوں میں سی این جی سیکٹر کو مکمل طور پر گیس بند نہ کرنے کا فیصلہ

لاہور ( خبرنگار) حکومت نے سردیوں میں سی این جی سیکٹر میں لوڈمنیجمنٹ شیڈول میں دو روز کا اضافہ، اور ایک ہزار سے زائد سی این جی اسٹیشنوں کو تین ماہ کے لئے بند کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ وزارت پٹرولیم کی جانب سے تیار کردہ ” گیس پلان“ کو اقتصادی رابطہ کمیٹی کے اجلاس میں منظوری کے لئے پیش کیا جائے گا۔ جس کے بعد 20 نومبر سے باقاعدہ عمل درآمد شروع ہو جائے گا۔ ”پاکستان“ کو وزارت پٹرولیم کے ذرائع نے بتایا ہے کہ سردیوں میں سی این جی سیکٹر کی مکمل طور پر گیس بند رکھنے کی بجائے جزوی طور پر گیس بند رکھنے کا فیصلہ کیا گیا ہے ، جس میں پہلے مرحلہ میں سی این جی سیکٹر میں لوڈمنیجمنٹ شیڈول کو بڑھانے جبکہ دوسرے مرحلہ میں شہری آبادیوں میں سی این جی اسٹیشنوں کو بند کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ وزارت پٹرولیم کے ذرائع نے بتایا ہے کہ سردیوں میں گیس کی ڈیمانڈ کے بعد سی این جی سیکٹر میں گیس کی بندش کا فیصلہ کیا جائے گا، وزارت پٹرولیم کے ایک اعلیٰ افسر کے مطابق سردیوں میں سی این جی سیکٹر کو مکمل طور پر بند کرنے پر لاکھوں گاڑیاں سستے فیول سے محروم ہوجائیں گی اور اربوں روپے ریونیو کے نقصان کا سامنا کرنا پڑے گا جبکہ سی این جی سیکٹر سے وابسطہ تین لاکھ سے زائد مزدور بے روزگار ہو کر رہ جائیں گے، جس پر حکومت نے سردیوں میں سی این جی سیکٹر کی مکمل طور پر گیس بند نہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے اور اس میں گیس کی ڈیمانڈ بڑھنے پر پہلے مرحلہ میں سی این جی سیکٹر میں لوڈمنیجمنٹ شیڈول میں دو روز اضافے کا فیصلہ کیا گیا ہے جبکہ دوسرے مرحلہ میں شہری آبادیوں میں واقع سی این جی اسٹیشنوں کو بند کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے جس میں لاہور سمیت پنجاب کے سات بڑے شہروں میں ایک ہزار سے زائد سی این جی اسٹیشنوں کو گیس کی سپلائی معطل رکھی جائے گی، جس میں لاہور میں 120 سے زائد سی این جی اسٹیشنوں کی گیس بند کی جائے گی۔ اسی طرح فیصل آباد ، شیخوپورہ، گوجرانوالہ، راولپنڈی، اور اسلام آباد سمیت ملتان میں شہری آبادیوں میں واقع سی این جی اسٹیشنوں کی گیس بند کی جائے گی۔وزارت پٹرولیم کے افسر کا کہنا تھا کہ گیس کی ڈیمانڈ کنٹرول سے باہر ہونے پر تیسرے اور آخری مرحلہ میں سی این جی سیکٹر کی مکمل طور پر گیس بند کرنے کا فیصلہ کیا جائے گا اور اس میں دس سے پندرہ دنوں میں گیس کی سپلائی بند کی جائے گی، تاہم حتمی فیصلہ گیس کی ڈیمانڈ کے مطابق کیا جائے گا، جبکہ سی این جی ایسوسی ایشن کے مرکزی چیئرمین غیاث پراچہ کا کہنا ہے کہ سی این جی سیکٹر کی گیس بند کی گئی تو ملک گیر احتجاجی تحریک چلائی جائے گی۔

سی اےن جی

مزید : صفحہ آخر