حکومت تاجروں اور صنعتکاروں کے مسائل پر توجہ نہیں دے رہی،حاجی اصغر

حکومت تاجروں اور صنعتکاروں کے مسائل پر توجہ نہیں دے رہی،حاجی اصغر

  

فیصل آباد (اے این این )فیصل آبادچیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے ا یگزیکٹو ممبر و چیئرمین قائمہ کمیٹی برائے کسٹم انیڈ ڈرائی پورٹ حاجی محمد اصغر نے کہا کہ ملکی حالات روزبروز خراب ہو رہے ، حکومت تاجروں اور صنعتکاروں کے مسائل پر توجہ نہیں دے رہی ، ، تاجروں اور صنعتکاروں کے کوئی سیاسی عزائم نہیں لیکن پاکستان کی سیا ست میں اس وقت جو کھیل کھیلا جا رہاہے وہ اس سے انتہائی پریشان کن ہے ،ملکی برآمدات زوال پذیر اور تجارتی خسا رہ پہلے ہی آسمان کو چھو رہاہے انہوں نے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ ، بجلی کمپنیوں کے لائن لاسز کی تلافی، بجلی قرضوں کی ادائیگی اور سود کی ادائیگی عوام سے وصول کرنے کیلئے بجلی بلوں میں لگائے جانے والے بھاری سرچارجز کی شدید مخالفت کرتے ہوئے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ ان تمام سرچارجز کو ختم کر نے پر غور کرے تا کہ بجلی سستی ہونے سے کاروبارکی لاگت کم ہو، کاروباری سرگرمیوں کو بہتر فروغ ملے اور مہنگائی کم ہونے سے عوام کی مشکلات کم ہوں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں بجلی کے کمرشل بلوں پر سرچارجز کل بل کا تقریبا 30فیصد سے زیادہ بنتے ہیں جس وجہ سے کاروبار کی لاگت بہت بڑھ گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ لائن لاسز، قرضوں کی ادائیگی اور دیگر واجبات کے مسائل کو حل کرنے کیلئے توانائی شعبے میں بنیادی اصلاحات لانے کی بجائے حکومت ان تمام مسائل کا بوجھ سرچارجز لگا کر عوام کو منتقل کر رہی ہے جو غیر منصفانہ اور صارفین کے بنیادی حقوق کی کھلی خلاف ورزی ہے۔

انہوں نے کہا کہ پاور کمپنیوں کو ادائیگیوں میں تاخیر کی وجہ سے سود کی مد میں حکومت کے ذمہ اربوں روپے کے بقایات جات جمع ہو چکے ہیں اور کابینہ کی اقتصادی رابطہ کمیٹی نے نیپرا کو ہدایات جاری کی ہیں کہ وہ ایسے تمام بقایاجات کو بھی صارفین کے بلوں میں ڈالے جو بالکل بلاجواز ہے۔ انہوں نے کہا اگر حکومت نے بجلی کمپنیوں کو بروقت ادائیگیاں نہیں کیں تو اس میں صارفین کا کیا قصور ہے اور ان پر حکومتی غفلت کا بوجھ کیوں ڈالا جا رہا ہے۔۔ انہوں نے کہاکہ بھارت میں بھی گزشتہ چند ماہ کے دوران7 بار پٹرولیم مصنوعات کے نرخوں میں کمی کی گئی ہے۔ انہوں نے کہاکہ پاکستان میں اس وقت ایک لیٹر پٹرول پرتقریباً50روپے تک کے مختلف ٹیکس عائد ہیں جوکہ خالصتاً حکومت کامنافع ہے کیونکہ ان کے ذریعے حکومت فوری طور پرمنافع مل جاتا ہے اس لئے وہ پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی نہیں کررہی ہے۔انہوں نے کہا کہ عالمی مارکیٹ میں کمی کے تناسب سے ملک میں بھی پٹرولیم مصنوعات کے نرخوں کوکم کیا جائے تاکہ مہنگائی کی چکی میں پسے عوام کو کچھ ریلیف مل سکے۔

مزید :

کامرس -