کراچی ،عدالتوں میں قتل کے سیکڑوں مقدمات 10 سال سے زیر التوا

کراچی ،عدالتوں میں قتل کے سیکڑوں مقدمات 10 سال سے زیر التوا

  

کراچی(اسٹاف رپورٹر) عدالتوں میں انصاف کی بدترین صورت حال کے باعث جرم کی مقررہ سزا سے زائد قید کاٹنے کے باوجود قیدیوں کے مقدمات التوا کا شکار ہیں۔رپورٹ کے مطابق پولیس کی غفلت و لاپرواہی ، پراسیکیوشن کی عدم دلچسی اور وکلا کے عدالتی بائیکاٹ کے باعث سابق چیئرمین اسٹیل ملز سجاد حسین کیس سمیت 300 قتل کے مقدمات 10 سال سے التوا کا شکار ہیں۔ صرف سٹی کورٹ میں 700 قیدیوں کو روزانہ جیل سے پیشی کیلیے لایا جاتا ہے اور مختلف کیسز میں 200 کے قریب قیدی جیل میں ہیں جنہیں عدالت میں پیش ہونے کیلئے صرف تاریخ ملتی ہے ۔ عدالتوں میں 300 کے قریب قتل کے مقدمات کئی ماہ سے بغیر کارروائی کے ملتوی ہورہے ہیں۔میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے ایک قیدی شکیل نے بتایا کہ وہ جعل سازی کے مقدمات میں 11 سال سے پابندِ سلاسل ہے۔ قیدی شکیل نے بتایا کہ اس کے خلاف تمام مقدمات میں کل سزا 7سال بنتی ہے لیکن وہ 11 سال سے قید ہے اور مقدمات جوں کے توں ہیں، پولیس گواہوں کو پیش نہیں کرتی اور استغاثہ کو کوئی دلچسپی نہیں ہے۔ایک اور قیدی نے بتایاکہ وہ ریڑھی لگاتا تھا اور پولیس کو بھتہ نہ دینے پر اسے مجرم بنادیا اور وہ 4 سال سے قید ہے۔ قیدی حسن نے کہاکہ لیاری کا رہائشی ہونے کے باعث اسے گینگ وار کا کارندہ بنادیا گیا، پولیس نے گولی مار کر مقابلے میں ملوث کردیا جبکہ کوئی عدالتی کارروائی نہیں ہورہی ہے۔

مزید :

کراچی صفحہ اول -