شہد کے نام پر شیرے کی فروخت، پنجاب فوڈ اتھارٹی کا ایکشن لینے کا فیصلہ

شہد کے نام پر شیرے کی فروخت، پنجاب فوڈ اتھارٹی کا ایکشن لینے کا فیصلہ

  

ملتان (وقائع نگار) : شہد کے نام پر شیرے کی فروخت کے خلاف پر ایکشن لیتے ہوئے پنجاب فوڈ اتھارٹی نے دودھ کے ساتھ شہد پر بھی کڑی نظر رکھنے کا فیصلہ کیا ہے۔ پنجاب فوڈ اتھارٹی نے تمام شہد پراسس کرنے والی فیکٹریوں اور پراڈکٹس کو باقاعدگی سے چیک کرنے کا فیصلہ کیا(بقیہ نمبر51صفحہ12پر )

ہے۔اس حوالے سے اوپن مارکیٹ سیمپلنگ شیڈول جاری کر دیا گیا ہے جس کے تحت 9نومبر تک تمام کمپنیوں کو پنجاب فوڈ اتھارٹی سے رابطہ کرنے کا نوٹس جاری کر دیا گیا ہے ۔نوٹس کے مطابق کمپنیوں کے نمائندوں دی گئی تاریخ تک فوڈ اتھارٹی سے رابطہ کریں جس کے بعد تمام نمائندوں کی موجودگی میں اوپن مارکیٹ سے نمونے لیے جائیں گے۔ نمونے آئی ایس او اور پاکستان ایکریڈیشن کونسل سے سرٹیفائیڈ لیبارٹریوں سے چیک کروائے جائیں گے۔اس حوالے سے ڈی جی فوڈ اتھارٹی نورالامین مینگل نے بات کرتے ہوئے بتایا کہ شہد پراسس کرنے والی کمپنیوں کے نمائندوں سے متعدد ملاقاتوں کے بعد موجودہ لائحہ عمل طے کیا گیا۔پنجاب میں شہد کی بڑی مقدار استعمال ہوتی ہیجس میں سردیوں کے موسم میں غیر معمولی اضافہ دیکھنے میں آتا ہے۔ نورالامین مینگل کا مزید کہناتھا کہ شہد کا ذیادہ تر استعمال بچوں کی غذا میں کیا جاتا ہے۔سردیوں میں کھپت کو پورا کرنے لے لیے پراسس شہد کے نام پر مارکیٹ میں جعل سازی کی رپورٹ موصول ہو رہی ہیں۔ لیبارٹری تجزیے کے بعد صرف معیاری شہد کی فروخت اجازت ہو گی۔انہوں نے مزید بتایاکہ ناقص اور ملاوٹی اشیاء فروخت کرنے والوں کے خلاف کاروائیوں کا پہلے ہی آغاز کر دیا گیا ہے اور پنجاب فوڈ اتھارٹی اب تک ہزاروں من ناقص ، ملاوٹ ذدہ اور جعلی شہد تلف کر چکی ہے۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -