ننکانہ صاحب: صدیق الفاروق کی آمد پر وکلاء کا احتجاج، پولیس کا لاٹھی چارج، متعدد زخمی

ننکانہ صاحب: صدیق الفاروق کی آمد پر وکلاء کا احتجاج، پولیس کا لاٹھی چارج، ...

  

ننکانہ صاحب (نمائندہ خصوصی )سکھ مذہب کے بانی اور روحانی پیشوا باباگورونانک کے 549ویں جنم دن کی تقریبات کے موقع پر چیئر مین متروکہ وقف املاک بورڈ صدیق الفاروق کی گورودوارہ جنم استھان ننکانہ صاحب آمد، وکلاء کا چیئرمین صدیق الفاروق کیخلاف شدید احتجاج، پولیس کا لاٹھی(بقیہ نمبر63صفحہ12پر )

چا رج متعدد وکلاء زخمی ہوگئے۔ واضح رہے بابا گورو نانک انٹرنیشنل یونیورسٹی ننکانہ صاحب سے کسی اور مقام پر منتقل اور یونیورسٹی کا ننکانہ صاحب میں سنگ بنیاد رکھنے تک وکلاء نے چیئر مین اوقاف صدیق الفاروق کے ننکانہ آنے پر پابندی لگا رکھی تھی، گزشتہ روز جب بابا گورو نانک کے جنم دن کی تقریبات کے موقع پر چیئرمین اوقاف صدیق الفاروق درجنوں مسلح سکیورٹی گارڈز کے ہمراہ گورودوارہ جنم استھان پہنچے تو وکلاء چھٹی کے باوجود گھروں سے نکل آئے اور ضلع کچہری سے احتجاجی ریلی نکالی ، چیئر مین اوقاف کیخلاف شدید نعرے بازی کی ،ریلی میں بابا گورو نانک یونیورسٹی بچاؤ تحریک کے کنونیئر محمد امین بھٹی ، صدر بار رائے محمد اکرم بھٹی ، جنرل سیکرٹری رائے قاسم مشتاق ، چوہدری محمد انور زاہد اور وکلا ء نے رکاوٹیں توڑتے ہوئے دھرنا دینے کیلئے گورودوارہ جنم استھان کی طرف جانے کی کوشش کی تو پولیس نے وکلاء پر لاٹھی چارج کیاجس کے نتیجہ میں صدر بار ننکانہ رائے محمد اکرم بھٹی، سابق جنرل سیکرٹری رائے عابد حسین کھر ل، صدر مسلم لائرز فورم رائے محمد قذافی، جنرل سیکرٹری ملک علی عمران اعوان، پیپلز لائزر فورم کے صدر میاں لیاقت علی، احسان اللہ شاکر سمیت دیگر وکلاء شدید زخمی ہوگئے ۔ پولیس ذرائع کے مطابق ضلعی انتظامیہ نے ممکنہ نا خوشگوار واقع سے بچنے کیلئے تحریری طور پر چیئر مین اوقاف کو ننکانہ صاحب آنے سے منع کیا تھا ۔وکلاء کے احتجاج کی خبر سنتے ہی چیئرمین صدیق الفاروق ننکانہ صاحب سے واپس روانہ ہو گئے ، ڈی پی او ننکانہ صاحب صاحبزادہ بلال عمر نے موقعہ پر پہنچ کر بتایا چیئرمین صدیق الفاروق گورودوارہ جنم استھان سے واپس جا چکے ہیں جس پر وکلاء نے احتجاج ختم کردیا اس موقعہ پر باباگورونانک انٹرنیشنل یونیورسٹی بچاؤ تحریک کے کنونیئر محمد امین بھٹی نے کہا ننکانہ صاحب کے عوام کیساتھ ملکر باباگورونانک انٹرنیشنل یونیورسٹی کے جلد قیام کی جدوجہد جاری رکھیں گے ،یونیورسٹی ننکانہ کے عوام اور آنیوالی نسلوں کا حق ہے اور ہم یہ حق لینے کیلئے کسی بھی قربانی سے دریغ نہیں کریں گے ۔ یونیورسٹی کے سنگ بنیاد نہ رکھے جانے تک احتجاج جاری رہے گا ،حکو مت صدیق الفاروق کو فوری طور پر عہدے سے برطرف، باباگورونانک انٹرنیشنل یونیورسٹی کا قیام یقینی بنائے تاکہ عوام میں پائی جانیوالی بے چینی کا ازالہ ہوسکے۔

ننکانہ وکلاء احتجاج

مزید :

ملتان صفحہ آخر -