اداکارہ رابی پیر زادہ کی خود کشی کے بارے خبریں بے بنیاد

اداکارہ رابی پیر زادہ کی خود کشی کے بارے خبریں بے بنیاد

  



لاہور(فلم رپورٹر)شوبز کے مختلف شعبوں سے تعلق رکھنے والی شخصیات کا کہنا ہے کہے کہا کہ رابی پیر زادہ کی خود کشی بارے خبریں بے بنیاد ہیں، انہوں نے کہا کہ ہمیں اس بارے کوئی بھی بات نہیں کرنی چاہیے، اور حقائق جانے بغیرانہیں سچا یا جھوٹا کہنے سے اجتناب کرنا چاہیے، ہم لوگوں نے ہمیشہ دوسروں کی کردار کشی کو اپنا شعار بنایا ہے جو کہ درست نہیں ہے۔اللہ تعالیٰ بھی دوسروں کا پردہ رکھتا ہے ہمیں بھی کسی کی ذاتی زندگی میں دخل ادازی کا کوئی حق نہیں ہے۔ یاد رہے کہ گزشتہ دنوں رابی پیرزادہ کے ایک وڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہوئی ہے جس پر ان کو سخت تنقید کا سامنا ہے تاہم رابی پیر زادہ کا کہنا ہے کہ انہوں نے یہ وڈیو شیئر نہیں کی بلکہ یہ وڈیو ان کے پْرانے سمارٹ فون میں تھی جو کہ انہوں نے بیچ دیاتھا ۔شاہد حمید، شان،معمر رانا،مسعود بٹ،ارمینا رانا خان، پرویز کلیم،میگھا،ماہ نور،شاہدہ منی،محمد قوی خان،لائبہ علی، سہراب افگن،سٹار میکر جرار رضوی،یار محمد شمسی صابری، تنویر آفریدی،گلفام،ہانی بلوچ،اچھی خان،ذویا قاضی،مایا سونو خان،ڈیشی راج،آغا قیصر عباس،سدرہ نور،ندا چوہدری،آفرین خان،آفرین پری، آشا چوہدری،عامر راجہ،بی جی،سفیان احمد،انوسنٹ اشفاق،محرمہ علی،عباس باجوہ،آغا حیدر،شین فریال،نادیہ علی،سوھنی بلوچ،اشرف خان،عذرا آفتاب،حیدر سلطان،بابرہ علی،تابندہ علی،ڈاکٹر اجمل ملک،مختار احمد چوہان،فیصل بخاری،چوہدری اعجاز کامران،قیصر ثناء اللہ خان،حاجی عبد الرزاق،پریسہ،حنا ملک،شہزاد چندا،ہنی البیلا،حسن مراد،امان اللہ،نجم زیدی،حمیرا،سونیا رباب،ثمینہ بٹ،سرفراز وکی،بینا سحر،عائشہ جاوید،ابرار ہاشمی،وقاص کیدو،زری لعل،شہہ پارہ،ستارہ بیگ،لکی ڈیئر،طاہر نوشاد،مختار چن،اسد مکھڑا،شجر عباس،نواز انجم،احمد نواز،محسن گیلانی،دلاور ملک،عباس اشرف،افشین اشرف،بینا چوہدری اور دیگر کا کہنا ہے کہ ماضی میں بھی ونینا ملک،میرا،صوفیہ مرزا،ردا اصفہانی سمیت بہت ساری اداکاراؤں کی ویڈیوز منظر عام پر آچکی ہیں لیکن ہم لوگ پہلے شور مچاتے ہیں اور بعد میں ایسی خاموشی ہوتی ہے کہ جس کوئی جواب نہیں ہم سب کو رابی پیرزادہ سمیت دوسروں پر انگلی اٹھانے سے قبل اپنے اپنے گریبانوں میں جھانکنا چاہیے کہ کیا ہم سے کبھی کوئی غلطی نہیں ہوئی ہے اگر ایسا ہے تو ہمیں موجودہ معاملہ پر بھی چپ ہی رہنا چاہیے۔

مزید : کلچر