ماتحت عدالتوں نے 3ہفتوں میں 1لاکھ 98ہزار سے زائد مقدمات نمٹا دیئے 

  ماتحت عدالتوں نے 3ہفتوں میں 1لاکھ 98ہزار سے زائد مقدمات نمٹا دیئے 

  

 لاہور(نامہ نگارخصوصی)چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ محمد قاسم خان کی جانب سے انصاف کی جلد فراہمی کی ہدایت کی روشنی میں پنجاب بھرکی ماتحت عدالتوں نے 3ہفتوں میں ایک لاکھ98 ہزار سے زائد مقدمات نمٹا دیئے، چیف جسٹس کی ہدایت پر ڈائریکٹوریٹ آف ڈسٹرکٹ جوڈیشری لاہور ہائی کورٹ کی جانب سے12 اکتوبر کو پنجاب بھر کی عدالتوں کو ہدایات نامہ جاری کیا گیا۔ متذکرہ ہدایات نامہ جاری ہونے کے بعد 31 اکتوبر تک صوبہ بھر کی سول عدالتوں میں ایک لاکھ 47 ہزار595 جبکہ سیشن عدالتوں میں 50 ہزار 418 مقدمات کے فیصلے کئے گئے۔ڈائریکٹوریٹ آف ڈسٹرکٹ جوڈیشری کی جانب سے جاری اعدادوشمار کے مطابق گزشتہ تین ہفتوں میں لاہور کی سول عدالتوں میں 20 ہزار 806 مقدمات کے فیصلے کئے گئے جن میں سے9 ہزار کے قریب دیوانی دعووں (ریگولرسوٹس) کے فیصلے بھی کئے گئے۔مزیدبرآں لاہور کی سیشن عدالتوں میں 6 ہزار669 سیشن مقدمات بھی نمٹائے گئے جن میں سے 50 مرڈر ٹرائلزبھی مکمل کئے گئے۔اعدادوشمار کے مطابق فیصل آباد کی سول و سیشن عدالتوں میں بالترتیب 10 ہزار973 اور تین ہزار393 مقدمات کے فیصلے کئے گئے۔ مظفرگڑھ کی سول عدالتوں میں 4 ہزار627 سول اور دو ہزار 27سیشن مقدمات کے فیصلے کئے گئے۔ مزیدبرآں گوجرانوالہ کی 46 سول عدالتوں میں 6 ہزار429 مقدمات جبکہ 22 سیشن عدالتوں میں 2 ہزار244 مقدمات کے فیصلے ہوئے۔ گزشتہ تین ہفتوں میں ملتان کی سول عدالتوں میں 7 ہزار803 جبکہ سیشن عدالتوں میں 2 ہزار 596 مقدمات کے فیصلے کئے گئے، راولپنڈی کی سول عدالتوں میں 8ہزار 289 اور سیشن عدالتوں میں 1ہزار 869 مقدمات کے فیصلے ہوئے۔ شیخوپورہ کی سول عدالتوں میں 3ہزار698 اور سیشن عدالتوں میں 13سو 58 مقدمات کے فیصلے کئے گئے۔ اسی طرح بہاولپور کی ضلعی عدالتوں میں 5 ہزار903 مقدمات کے فیصلے ہوئے جن میں سے چار ہزار304 سول اور ایک ہزار 599 سیشن مقدمات شامل ہیں۔ رحیم یار خان کی سول و سیشن عدالتوں میں کل پانچ ہزار 927 مقدمات کے فیصلے کئے گئے جن میں سے تین ہزار793 دیوانی جبکہ 2 ہزار 134 سیشن مقدمات شامل ہیں۔ چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ محمد قاسم خان نے تمام اضلاع کی بہترین کارکردگی کو سراہتے ہوئے کہا کہ سائلین کو عدالتوں میں ہر ممکن سہولیات سمیت جلد اور معیاری انصاف کی فراہمی اولین ترجیح ہے۔

ماتحت عدالتیں 

مزید :

صفحہ آخر -